نماز کی اہمیت ، مسائل ، طریقه اور جمع بین الصلاتین



نماز ( الصَّلٰوةَ)  اسلام کے پانچ بنیادی ستونوں ایک ہے- نماز ایمان کے بعد اسلام کا اہم ترین رُکن ہے- رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے ارشاد فرمایا: اللہ تعالیٰ نے بندوں پر پانچ نمازیں فرض فرمائی ہیں، جو اِن نمازوں کو اس طرح لیکر آئے کہ ان میں لاپرواہی سے کسی قسم کی کوتاہی نہ کرے تو حق تعالیٰ شانہ کا عہد ہے کہ اس کو جنت میں ضرور داخل فرمائیں گے۔ اور جو شخص ایسا نہ کرے تو اللہ تعالیٰ کا کوئی عہد اس سے نہیں، چاہے اسکو عذاب دیں چاہے جنت میں داخل کردیں ۔ ایک دوسری حدیث میں ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا: اللہ تعالیٰ نے اپنے بندوں پر پانچ نمازیں فرض فرمائی ہیں، جو اِن نمازوں کو (قیامت کے دن) اس طرح لیکر آئے کہ ان میں لاپرواہی سے کسی قسم کی کوتاہی نہ کی ہو تو اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اس بندے سے عہد کرکے اس کو جنت میں داخل فرمائیں گے اور جو اِن نمازوں کواس طرح لیکر آئے کہ ان میں لاپرواہیوں سے کوتاہیاں کی ہیں تو اللہ کا اس سے کوئی عہد نہیں چاہے اسکو عذاب دیں ، چاہے معاف فرمادیں. (مؤطا مالک، ابن ماجہ، مسند احمد) غور فرمائیں کہ نماز کی پابندی پر جس میں زیادہ مشقت بھی نہیں ہے، مالک الملک دو جہاں کا بادشاہ جنت میں داخل کرنے کا عہد کرتا ہے پھر بھی ہم اس اہم عبادت سے لاپرواہی کرتے ہیں۔
………………………………….

مجبوری میں کرسی پر بیٹھ کر نماز پڑھنا >>>>>>

………………………………….

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے ارشاد فرمایا: جو شخص پانچوں نمازوں کی اس طرح پابندی کرے کہ وضو اور اوقات کا اہتمام کرے، رکوع اور سجدہ اچھی طرح کرے اور اس طرح نماز پڑھنے کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے اپنے ذمہ ضروری سمجھے تو اس آدمی کو جہنم کی آگ پر حرام کردیا گیا۔ (مسند احمد)
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے ارشاد فرمایا: جنت کی کنجی نمازہے، اور نماز کی کنجی پاکی (وضو) ہے۔ (ترمذی، مسند احمد)
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ شبِ معراج میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم  پر پچاس نمازیں فرض ہوئیں، پھر کم ہوتے ہوتے پانچ رہ گئیں۔ آخر میں (اللہ تعالیٰ کی طرف سے) اعلان کیا گیا۔ اے محمد! میرے ہاں بات بدلی نہیں جاتی، لہذا پانچ نمازوں کے بدلے پچاس ہی کا ثواب ملے گا۔ (ترمذی)

صرف نماز ہی دینِ اسلام کا ایک ایسا عظیم رُکن ہے جسکی فرضیت کا اعلان زمین پر نہیں بلکہ ساتوں آسمانوں کے اوپر بلند واعلیٰ مقام پر معراج کی رات ہوا۔ نیز اسکا حکم حضرت جبرائیل علیہ السلام کے ذریعہ نبی اکرم ا تک نہیں پہنچا، بلکہ اللہ تعالیٰ نے فرضیتِ نماز کا تحفہ بذاتِ خود اپنے حبیب کو عطا فرمایا۔


نماز( الصَّلٰوةَ)  ادا کرنے کی اہمیت و فضیلت کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ قرآن مجید میں تقریبًا سات سو مقامات پر نماز کا ذکر آیا ہے، کچھ درج ذیل  ہیں:
1. وَاَقِيْمُوا الصَّلٰوةَ وَاٰتُوا الزَّکٰوةَ وَارْکَعُوْا مَعَ الرّٰکِعِيْنَo
البقرة، 2 : 43
’’اور نماز قائم رکھو اور زکوٰۃ دیا کرو اور رکوع کرنے والوں کے ساتھ (مل کر) رکوع کیا کروo‘‘
2. يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ اسْتَعِينُواْ بِالصَّبْرِ وَالصَّلاَةِ إِنَّ اللّهَ مَعَ الصَّابِرِينَO
البقرة، 2 : 153
’’اے ایمان والو! صبر اور نماز کے ذریعے (مجھ سے) مدد چاہا کرو، یقینا اﷲ صبر کرنے والوں کے ساتھ (ہوتا) ہےo‘‘
3. إِنَّ الَّذِينَ آمَنُواْ وَعَمِلُواْ الصَّالِحَاتِ وَأَقَامُواْ الصَّلاَةَ وَآتَوُاْ الزَّكَاةَ لَهُمْ أَجْرُهُمْ عِندَ رَبِّهِمْ وَلاَ خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلاَ هُمْ يَحْزَنُونَO
البقرة، 2 : 277
’’بے شک جو لوگ ایمان لائے اور انہوں نے نیک اعمال کیے اور نماز قائم رکھی اور زکوٰۃ دیتے رہے ان کے لیے ان کے رب کے پاس ان کا اجر ہے، اور ان پر (آخرت میں) نہ کوئی خوف ہوگا اور نہ وہ رنجیدہ ہوں گےo‘‘
اِس کے علاوہ کثیر احادیث مبارکہ میں فضیلتِ نماز بیان کی گئی ہے اور نماز ادا نہ کرنے پر وعید آئی ہے۔ نیز نماز کی جملہ تفصیلات بھی ہمیں احادیث میں ہی ملتی ہیں۔
حضرت عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا :
1. خَمْسُ صَلَوَاتٍ افْتَرَضَهُنَّ اﷲُ عزوجل، مَنْ أَحْسَنَ وُضُوْءَ هُنَّ وَصَلاَّهُنَّ لِوَقْتِهِنَّ وَأَتَمَّ رُکُوْعَهُنَّ وَخُشُوْعَهُنَّ، کَانَ لَهُ عَلَی اﷲِ عَهْدُ أَنْ يَغْفِرَ لَهُ، وَمَنْ لَمْ يَفْعَلْ فَلَيْسَ لَهُ عَلَی اﷲِ عَهْدٌ، إِنْ شَاءَ غَفَرَلَهُ، وَ إِنْ شَاءَ عَذَّبَهُ.
أبوداود، السنن، کتاب الصلاة، باب في المحافظة في وقت الصلوات، 1 : 174، 175، رقم : 425
’’پانچ نمازیں ہیں جن کو اﷲ تعالیٰ نے اپنے بندوں پر فرض قرار دیا ہے۔ جس نے ان نمازوں کو بہترین وضو کے ساتھ ان کے مقررہ اوقات پر ادا کیا اور ان نمازوں کو رکوع، سجود اور کامل خشوع سے ادا کیا تو ایسے شخص سے اﷲ تعالیٰ کا وعدہ ہے کہ اس کی مغفرت فرما دے گا اور جس نے ایسا نہیں کیا (یعنی نماز ہی نہ پڑھی یا نماز کو اچھی طرح نہ پڑھا) تو ایسے شخص کے لیے اﷲ تعالیٰ کا کوئی وعدہ نہیں ہے اگر چاہے تو اس کی مغفرت فرما دے اور چاہے تو اس کو عذاب دے۔‘‘
2. عَنْ أَبِي ذَرٍّ رضی الله عنه أَنَّ النَّبِيَّ صلی الله عليه وآله وسلم خَرَجَ زَمَنَ الشِّتَاءِ وَالْوَرَقُ يَتَهَافَتُ فَاَخَذَ بِغُصْنَيْنِ مِنْ شَجَرَةٍ، قَالَ : فَجَعَلَ ذَلِکَ الْوَرَقُ يَتَهَافَتُ، قَالَ : فَقَالَ : يَا أَبَا ذَرٍّ قُلْتُ : لَبَّيْکَ يَا رَسُوْلَ اﷲِ، قَالَ : إِنَّ الْعَبْدَ الْمُسْلِمَ لَيُصَلِّ الصَّلَاةَ يُرِيْدُ بِهَا وَجْهَ اﷲِ فَتَهَافَتُ عَنْهُ ذُنُوْبُهُ کَمَا يَتَهَافَتُ هَذَا الْوَرَقُ عَنْ هَذِهِ الشَّجَرَةِ.(احمد بن حنبل، المسند، 5 : 179، رقم : 21596)
’’حضرت ابوذر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم موسمِ سرما میں جب پتے (درختوں سے) گر رہے تھے باہر نکلے، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک درخت کی دو شاخوں کو پکڑ لیا، ابو ذر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں شاخ سے پتے گرنے لگے۔ راوی کہتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے پکارا : اے ابو ذر! میں نے عرض کیا : لبیک یا رسول اﷲ۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : مسلمان بندہ جب نماز اس مقصد سے پڑھتا ہے کہ اسے اﷲ تعالیٰ کی رضا حاصل ہو جائے تو اس کے گناہ اسی طرح جھڑ جاتے ہیں جس طرح یہ پتے درخت سے جھڑتے جا رہے ہیں۔‘‘
3. عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضی الله عنه قَالَ : قَالَ رَسُولُ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم : إِنَّ أَوَّلَ مَا يُحَاسَبُ بِهِ الْعَبْدُ بِصَلَاتِهِ، فَإِنْ صَلَحَتْ فَقَدْ أَفْلَحَ وَأَنْجَحَ، وَإِنْ فَسَدَتْ فَقَدْ خَابَ وَخَسِرَ.
نسائی، السنن، کتاب الصلاة، باب المحاسبة علی الصلاة، 1 : 232، رقم : 465
’’حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : قیامت کے روز سب سے پہلے نماز کا محاسبہ ہوگا۔ اگر نماز شرائط، اَرکان اور وقت کے مطابق ادا کی گئی ہوئی تو وہ شخص نجات اور چھٹکارا پائے گا اور مقصد حاصل کرے گا۔‘‘
……………………………………………………..
بِسْمِ اللهِ الرَّحْمنِ الرَّحِيْم

وضو، تیمم، غسل اور نماز کے ضروری مسائل
مرتب: ڈاکٹر محمد نجیب قاسمی سنبھلی
وضو کے فرائض:
وضو میں چار فرض ہیں، جن میں سے اگر ایک بھی چھوٹ جائے تووضو نہیں ہوگا۔
1) پیشانی کے بالوں سے ٹھوڑی کے نیچے تک ، اور دونوں کان کی لو تک چہرا دھونا۔
2) دونوں ہاتھ کہنیوں سمیت دھونا۔
3) چوتھائی سر کا مسح کرنا۔
4) دونوں پاؤں ٹخنوں سمیت دھونا۔

وضو کی سنتیں:
سنت چھوڑنے سے وضو تو ہوجاتا ہے مگر ثواب کم ملتا ہے۔
(1) نیت کرنا۔
(۲) شروع میں بِسْمِ اللّہِ پڑھنا۔
(۳) پہلے تین بار دونوں ہاتھ گٹوں تک دھونا۔
(۴) تین بار کلی کرنا۔ (۵) مسواک کرنا۔
(۶) تین بار ناک میں پانی ڈالنا۔
(۷) تین بار چہرا دھونا۔
(۸) تین بار کہنیوں سمیت دونوں بانھیں دھونا۔
(۹) سارے سر کا اور کانوں کا مسح کرنا۔
(۱۰) ڈاڑھی اور انگلیاں کا خلال کرنا۔
(۱۱) لگاتار اس طرح دھونا کہ پہلا حصہ خشک نہ ہو نے پائے کہ دوسرا حصہ دھل جائے۔
(۱۲) ترتیب وار دھونا کہ پہلے چہرہ دھوئیں، پھر کہنیوں سمیت ہاتھ دھوئیں، پھر سر کا مسح کریں، پھر پاؤں دھوئیں۔

وضو کے مستحبات:
یعنی جن چیزوں کا کرنا باعث ثواب ہے۔
(1) قبلہ رخ ہوکر بیٹھنا۔
(۲) پاک اور اونچی جگہ پر بیٹھ کر وضو کرنا۔
(۳) داہنی طرف سے شروع کرنا۔
(۴) دوسرے سے حتی الامکان مدد نہ لینا۔
(۵) بچا ہوا پانی کھڑے ہوکر پینا۔

مکروہاتِ وضو:
یعنی جن امور سے آپ کو حتی الامکان بچنا چاہئے۔
(1) ناپاک جگہ پر وضو کرنا۔
(۲) سیدھے ہاتھ سے ناک صا ف کرنا۔
(۳) پانی زیادہ بہانا۔
(۴) وضو کرتے وقت دنیا کی باتیں کرنا۔
(۵) خلافِ سنت وضو کرنا۔
(۶) زور سے چھپکے مارنا۔

نواقصِ وضو:
یعنی جن چیزوں سے وضو ٹوٹ جاتا ہے۔
(1) پاخانہ یا پیشاب کرنا۔
(۲) ہوا خارج ہونا۔
(۳) بدن کے کسی حصہ سے خون یا پیپ نکل کر بہہ جانا۔
(۴) منہ بھر کے قے ہونا۔
(۵) ٹیک لگاکر یا لیٹ کر سوجا نا۔
(۶) نشہ میں مست یا بے ہوش ہوجانا۔
(۷) رکوع سجدہ والی نماز میں قہقہہ مارکر ہنسنا۔

غسل کے فرائض:
غسل میں تین فرض ہیں، جن میں سے اگر ایک بھی چھوٹ جائے تو غسل نہیں ہوتا۔
1) خوب حلق تک پانی سے منہ بھر کر کلّی کرنا۔
2) ناک میں سانس کے ساتھ پانی چڑھانا جہاں تک نرم جگہ ہے۔
3) تمام بدن پر اس طرح پانی بہانا کہ بال برابر بھی جگہ سوکھی نہ رہ جائے۔

غسل کی سنتیں:
سنت چھوڑنے سے غسل تو ہوجاتا ہے مگر ثواب کم ملتا ہے۔
(1) دونوں ہاتھ گٹوں تک دھونا۔
(۲) ظاہری ناپاکی دور کرنا اور استنجا کرنا۔
(۳) غسل کی نیت کرنا۔
(۴) وضو کرنا۔
(۵) بدن کو ملنا۔
(۶)سارےبدن پر تین بار پانی بہانا۔

غسل کے مکروہات:
یعنی جن امور سے آپ کو حتی الامکان بچنا چاہئے۔
1) پانی بہت زیادہ استعمال کرنا۔
(۲) اتنا کم پانی لینا کہ اچھی طرح غسل نہ کرسکیں۔
3) ننگا ہونے کی حالت میں غسل کرتے وقت کسی سے بات چیت کرنا۔

تیمم کے فرائض اور طریقہ
تیمم میں تین فرض ہیں:
1) نیت کرنا۔
2) دونوں ہاتھ مٹی پر مارکر پورے چہرے پر پھیرنا۔
3) دونوں ہاتھ مٹی پر مارکر  کہنیوں سمیت دونوں ہاتھوں کو ملنا۔
بیماری اور پانی نہ ملنے کی صورت میں وضو کی جگہ تیمم کرلینے کا حکم ہے۔ جس کا طریقہ یہ ہے کہ اوّل ناپاکی دور کرنے کی نیت کریں ۔ پھر پاک مٹی یا ایسی چیز پر جو مٹی کے حکم میں ہو  دونوں ہاتھ مارکر ایک بار اپنے چہرے پر پھیر لیں، پھر دوسری مرتبہ پاک مٹی پر ہاتھ مارکر دونوں ہاتھ کہنیوں سمیت ملیں۔

پانچوں نمازوں کے اوقات اور
رکعات:
نمازِ فجر:
1.صبح صادق سے  سورج کے طلوع ہونے تک۔۔۔
نمازِ فجر کی چار رکعات:
پہلے دو سنتیں ، پھر دو فرض۔۔۔

2.نمازِ ظہر: زوالِ آفتاب سے  نمازِ عصر کا وقت شروع ہونے تک۔۔۔
نمازِ ظہر کی بارہ رکعات:
پہلے چار سنتیں، پھر چار فرض، پھر دو سنتیں، پھر دو نفل

3.نمازِ عصر: جب ہر چیز کا سایہ اصلی سایہ کے علاوہ دو مثل ہوجائے تو ظہر کا وقت ختم ہوکرعصر کا وقت شروع ہوجاتا ہے  اور غروبِ آفتاب تک رہتا ہے۔۔۔
نمازِ عصر کی آٹھ رکعات: پہلے چار سنتیں غیر مؤکدہ ، پھر چار فرض

4.نمازِ مغرب: غروبِ آفتاب سے  تقریباً ڈیڑھ گھنٹہ تک۔مغرب کی نماز کی ادائیگی میں زیادہ تاخیر کرنا مکروہ ہے۔۔۔
نمازِ مغرب کی سات رکعات:
پہلے تین فرض، پھر دو سنتیں، پھر دو نفل

5.نمازِ عشا: سورج چھپنے کے تقریبا ڈیڑھ گھنٹہ کے بعد سے صبح صادق تک۔آدھی رات کے بعد عشا کی نماز کے لئے مکروہ وقت شروع ہوجاتا ہے۔
نمازِ عشا کی سترہ رکعات:
پہلے چار سنتیں غیر مؤکدہ ، پھر چار فرض، پھر دو سنتیں، پھر دو نفل، پھر تین وتر، اور دو نفل۔
دن رات میں کل ۱۷ رکعات فرض، ۳ وتر، ۱۲ رکعات سنن مؤکدہ، ۸ رکعات سنن غیر مؤکدہ ہیں۔

جمعہ کے دن ظہر کے وقت ظہر کی نماز کے بجائے نمازِ جمعہ (دو فرض امام کے ساتھ) ادا کی جائے گی۔ نمازِ جمعہ عورتوں پر فرض نہیں ہے لہذا وہ اس کی جگہ نمازِ ظہر ادا کریں۔ اگر کسی شخص نے جمعہ کی نماز  امام کے ساتھ نہیں پڑھی تو اس کی جگہ نمازِ ظہر (چار رکعات) ادا کرے، ہاں اگر مسافر ہو تو دو رکعت ظہر کی ادا کرے۔

نماز جمعہ کی 14 رکعات اس طرح ہیں: پہلے 4 سنتیں، پھر ۲ فرض، پھر 4 سنتیں، پھر ۲ سنتیں، پھر ۲ نفل۔

مسئلہ: نفل اور غیر مؤکدہ سنتوں کا حکم یہ ہے کہ پڑھنے پر ثواب ملے گا، اور نہ پڑھنے پر کوئی گناہ نہیں، البتہ سنن مؤکدہ کو عذر کے بغیر نہیں چھوڑنا چاہئے کیونکہ احادیث میں ان کی خاص تاکید اور اہمیت وارد ہوئی ہے۔
جب بھی مسجد میں داخل ہوں تو پہلے دور رکعت نفل ادا کریں

نماز کے شرائط وفرائض اور واجبات

شرائطِ نماز:
1) بدن کا پاک ہونا۔
2) کپڑوں کا پاک ہونا۔
3) ستر کا چھپانا۔
مردوں کو ناف سے گھٹنوں تک، اور عورتوں کو چہرہ ، ہاتھوں اورقدموں کے علاوہ تمام بدن کا ڈھانکنا فرض ہے۔
4) نماز پڑھنے کی جگہ کا پاک ہونا۔
5) نماز کا وقت ہونا۔
6) قبلہ کی طرف رخ کرنا۔
7) نماز کی نیت کرنا۔

فرائض وارکانِ نماز:
1) تکبیر تحریمہ۔
2) قیام یعنی کھڑا ہوا۔
3) قراء ت یعنی ایک بڑی آیت یا تین چھوٹی آیتیں پڑھنا۔
4) رکوع کرنا۔
5) سجدہ کرنا۔
6) قعدہ اخیرہ کرنا۔
7) اپنے ارادہ سے نماز ختم کرنا (یعنی سلام پھیرنا) ۔۔۔
اگر ان شرائط اور فرائض میں سے کوئی ایک چیز بھی جان کر یا بھول کر رہ جائے تو نماز ادا نہیں ہوگی۔

واجباتِ نماز:
1) الحمد پڑھنا۔
2) الحمد کے ساتھ کوئی سورت ملانا۔
3) فرضوں کی پہلی دو رکعت میں قراء ت کرنا۔
4) الحمد کو سورت سے پہلے پڑھنا۔
5) رکوع کرکے سیدھا کھڑا ہونا۔
6) دونوں سجدوں کے درمیان بیٹھنا ۔
7) پہلا قعدہ کرنا۔
8) التحیات پڑھنا۔
9) لفظ سلام سے نماز ختم کرنا۔
10) ظہر اور عصر میں قراء ت آہستہ پڑھنا۔(امام بلند آواز میں قرات نہیں کرتا )
11) امام کے لئے مغرب وعشاء کی پہلی دو رکعتوں، اور فجر وجمعہ وعیدین اور تراویح کی سب رکعتوں میں قراء ت بلند آواز سے پڑھنا۔۔۔
ان مذکورہ واجبات میں سے اگر کوئی واجب بھول کر چھوٹ جائے تو سجدہ سہو کرنا واجب ہوگا۔ اور قصداً چھوڑدینے سے نماز دوبارہ پڑھنا واجب ہوتا ہے۔

نماز کی سنتیں:
یہ امور نماز میں سنت ہیں، جن کے ترک کرنے پر نماز تو ادا ہوجائے گی مگر ثواب میں کمی ہوگی۔۔۔
1) تکبیر تحریمہ کے وقت مردوں کو دونوں ہاتھ کانوں تک اٹھانا اور عورتوں کو سینے تک اٹھانا۔
2) مردوں کو ناف کے نیچے اور عورتوں کو سینے پر ہاتھ باندھنا۔
2) ثنا یعنی سُبْحَانَکَ اللّهُمَّ آخر تک پڑھنا۔
4) اَعُوذُ بِالله مِنَ الشَّيْطَانِ الرّجِيْم پڑھنا۔
5) بِسْم اللّہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِيْم پڑھنا۔
6) ایک رکن سے دوسرے رکن کو منتقل ہونے کے وقت اللہ اکبر کہنا۔
7) رکوع میں سُبْحَانَ رَبّیَ الْعَظِيْم کم از کم تین مرتبہ کہنا۔
8) رکوع سے اٹھتے ہوئے سَمِعَ اللّہُ لِمَنْ حَمِدَہ اور رَبّنَا لَکَ الْحَمْدکہنا۔
9) سجدہ میں کم از کم تین مرتبہ سُبْحَانَ رَبّیَ الاعْلیٰ کہنا۔
10) دونوں سجدوں کے درمیان اور التحیات کے لئے مردوں کو بائیں پاؤں پر بیٹھنا اور سیدھا پاؤں کھڑا کرنا، اور عورتوں کو دونوں پاؤں سیدھی طرف نکال کر کولھوں پر بیٹھنا۔
11) درود شریف پڑھنا۔
12) درود کے بعد دعا پڑھنا۔
13) سلام کے وقت دائیں اور بائیں طرف منہ پھیرنا۔
14) سلام میں فرشتوں ، مقتدیوں اور نیک جنات جو حاضر ہیں ان کی نیت کرنا۔

نماز کے مستحبات:
1) اگر چادر اوڑھے ہو تو کانوں تک ہاتھ اٹھانے کے لئے مردوں کو چادر سے ہاتھ نکالنا۔
2) جہاں تک ممکن ہو کھانسی کو روکنا۔
3) جمائی آئے تو منہ بند کرلینا۔
4) کھڑے ہونے کی حالت میں سجدہ کی جگہ اور رکوع میں قدموں پر اور سجدہ میں ناک پر اور قعدہ میں گود میں اور سلام کے وقت کاندھوں پر نظر رکھنا۔

مکروہاتِ نماز:
یہ چیزیں نماز میں مکروہ ہیں۔۔۔
1) کپڑا سمیٹنا۔
2) جسم یا کپڑے سے کھیلنا۔
3) انگلیاں چٹخانا۔
4) دائیں یا بائیں طرف گردن موڑنا۔
5) انگڑائی لینا۔
6) مرد کو سجدہ میں کہنیوں سمیت کلائیاں زمین پر بچھانا۔
7) سجدے میں (مردوں کے لئے) پیٹ کو رانوں سے ملانا۔
8) بغیر عذر کے چاروں زانو(پالتی مارکر) بیٹھنا۔
9) امام کا محراب کے اندر کھڑے ہوکر نماز پڑھانا۔
10) صف سے علیحدہ تنہا کھڑا ہونا۔
11) سامنے یا سر پر تصویر ہونا۔
12) تصویر والے کپڑوں میں نماز پڑھنا۔
13) کندھوں پر چادر یا کوئی کپڑا لٹکانا۔
14) پیشاب یا پاخانہ یا زیادہ بھوک کا تقاضی ہوتے ہوئے نماز پڑھنا۔
15)سر کھول کر نماز پڑھنا ۔ یہ کراہت مردوں کے لئے ہے۔
خواتین کا پورے سر کو ڈھانکنا ضروری ہے۔
16) آنکھیں بند کرکے نماز پڑھنا۔

نماز پڑھنے کا طریقہ:

  1. نماز پڑھنے کا طریقہ یہ ہے کہ پاک کپڑے پہن کر پاک جگہ پر باوضو قبلہ کی طرف منہ کرکے اس طرح کھڑے ہوں کہ دونوں قدموں کے درمیان چار انگل یا اس کے قریب قریب فاصلہ رہے، اور نماز کی نیت کرکے دونوں ہاتھ کانوں کی لو تک اٹھائیں اور اللہ اکبر کہہ کر ہاتھوں کو ناف کے نیچے باندھ لیں۔ داہنا ہاتھ اوپر اور بایاں ہاتھ اس کے نیچے رہے، اور نظر سجدہ کی جگہ پر رکھیں
  2. نماز میں ادھر ادھر نہ دیکھیں۔
  3. ادب سے کھڑے رہیں۔ صرف اللہ تعالی کی طرف دھیان رکھیں۔
  4. ہاتھ باندھ کر ثنایعنی سُبْحَانَکَ اللّهمّ۔۔۔۔ آخر تک پڑھیں۔
  5. پھر تعوذ یعنی اَعُوذُ بِالله مِنَ الشّيْطَانِ الرّجِيْم اور پھر تسمیہ یعنی بِسْمِ اللّہِ الرّحمٰنِ الرّحِيْم پڑھ کر الحمد شریف (سورۃ الفاتحہ) پڑھیں۔
  6. الحمد شریف ختم کرکے آہستہ سے آمین کہیں۔
  7. پھر کوئی سورت یا چند آیات پڑھیں۔
  8. پھر اللہ اکبر کہہ کر رکوع کے لئے جھکیں، رکوع میں دونوں ہاتھوں سے گھٹنوں کو پکڑ لیں۔ رکوع کی تسبیح یعنی سُبْحَانَ رَبّیَ الْعَظِيْم تین یا پانچ یا سات مرتبہ پڑھیں،
  9. پھر تسمیع یعنی سَمِعَ اللّه لِمَنْ حَمِدَہ کہتے ہوئے سیدھے کھڑے ہوجائیں،
  10. اس کے بعد تحمید یعنی رَبّنَا لَکَ الْحَمْد پڑھیں، 
  11. پھر تکبیر کہتے ہوئے سجدے میں اس طرح جائیں کہ پہلے دونوں گھٹنے زمین پر رکھیں، پھر دونوں ہاتھ رکھیں پھر دونوں ہاتھوں کے بیچ میں پہلے ناک ، پھر پیشانی زمین پر رکھیں،
  12. پھر سجدے کی تسبیح یعنی سُبْحَانَ رَبّیَ الاعْلیٰ تین یا پانچ یا سات مرتبہ پڑھیں۔
  13. پھر تکبیر کہتے ہوئے اٹھیں اور بیٹھ جائیں۔ پھر تکبیر کہتے ہوئے دوسرے سجدہ میں جائیں اور اسی طرح سجدہ کریں جیسا ابھی بتایا، دونوں سجدوں تک ایک رکعت پوری ہوگئی۔ 
  14. اب تکبیر یعنی اللہ اکبر کہتے ہوئے دوسری رکعت کے لئے کھڑے ہوجائیں، صرف بسم اللہ پڑھ کر الحمد شریف پڑھیں، اس کے بعد کوئی سورت یا چند آیات پڑھیں۔ پھر رکوع ، قومہ اور دونوں سجدے کرکے بیٹھ جائیں، اور پہلے تشہد یعنی التحیات پھر درود شریف اور دعا پڑھ کر سلام پھیردیں، پہلے داہنی طرف پھر بائیں طرف۔ یہ دو رکعت نماز پوری ہوگئی۔ 
  15. اگر تین یا چار رکعت والی نماز پڑھنی ہو تو دو رکعت پر بیٹھ کر صرف التحیات پڑھیں۔
  16.  اس کے بعد فوراً تکبیر (یعنی اللہ اکبر) کہتے ہوئے کھڑے ہوجائیں۔ بسم اللہ اور الحمد شریف پڑھ کر رکوع وسجدے کریں۔ اگر تین رکعت پڑھنا ہو تو بیٹھ کر التحیات درود شریف اور دعا پڑھ کر سلام پھیر دیں۔
  17. اور اگر چار رکعت پڑھنا ہو تو تیسری رکعت پڑھ کر نہ بیٹھیں بلکہ تیسری رکعت کے دونوں سجدے کرکے سیدھے کھڑے ہوجائیں اور چوتھی رکعت یعنی بسم اللہ اور الحمد شریف پڑھ کر  رکوع اور سجدے کرکے بیٹھ جائیں اور التحیات پھر درود شریف اور دعا پڑھ کر دونوں طرف سلام پھیر دیں۔
1,مسئلہ:
نفل نمازوں کی تیسری اور چوتھی رکعت میں بھی الحمد شریف کے بعد کوئی سورت یا چند آیات پڑھیں کیونکہ فرض نمازوں کے علاوہ ہر نماز کی ہر رکعت میں الحمد شریف کے بعد سورت یا چند آیات پڑھنا واجب ہے۔

2,مسئلہ:
اگر امام کے پیچھے نماز پڑھ رہے ہیں تو تکبیر تحریمہ کے بعد ثنا کے علاوہ کچھ نہ پڑھیں۔ تعوذ، تسمیہ، الحمد شریف اور سورت صرف امام پڑھے گا۔ اسی طرح دوسری، تیسری اور چوتھی رکعت میں بھی امام کے پیچھے خاموش کھڑے رہیں، ہاں رکوع سجدہ کی تسبیح اور التحیات ودرود شریف اور اس کے بعد والی دعا امام کے پیچھے بھی پڑھیں۔

3.مسئلہ:
رکوع اس طرح کرنا چاہئے کہ کمر اور سر برابر رہیں یعنی سر نہ کمر سے اونچا رہے نہ نیچا ہوجائے اور دنوں ہاتھ پسلیوں سے علیحدہ رہیں اور گھٹنوں کو ہاتھوں کی انگلیاں سے پکڑ لیا جائے۔

4.مسئلہ:
سجدہ اس طرح کرنا چاہئے کہ ہاتھوں کے پنجے زمین پر اس طرح رہیں کہ انگلیاں پھیلی ہوئی اور آپس میں ملی رہیں اور سب کا رخ قبلہ کی طرف ہو۔ اور کلائیاں زمین سے اونچی رہیں۔ پیٹ رانوں سے اور دونوں کہنیاں پسلیوں سے علیحدہ رہیں اور دونوں پاؤں کی انگلیاں اس طرح مڑی رہیں کہ ان کے سر قبلہ رخ ہوجائیں۔ عورتوں کے لئے پیٹ کو رانوں سے اور بازو کو بغل سے ملاکر رکھنا چاہئے۔

5.مسئلہ:
رکوع سے اٹھتے وقت امام صرف سَمِعَ اللّہُ لِمَنْ حَمِدَہ کہے اور جو شخص امام کے پیچھے نماز پڑھ رہا ہو وہ صرف رَبّنَا لَکَ الْحَمْد کہے، اور جو تنہا پڑھے وہ ان دونوں کو کہے۔

6.مسئلہ:
دونوں سجدوں کے درمیان اور التحیات و درود شریف پڑھتے وقت مردوں کے لئے بیٹھنے کا طریقہ یہ ہے کہ بایاں پاؤں بچھاکر اس پر بیٹھ جائیں اور دایاں پاؤں کھڑا رکھیں۔ دونوں گھٹنے قبلہ کی طرف رہیں۔ داہنے پاؤں کی انگلیاں اچھی طرح موڑ دیں کہ قبلہ رخ ہوجائیں اور دونوں ہاتھ رانوں پر اس طرح رکھیں کہ انگلیاں سیدھی رہیں۔ اور عورتوں کو دونوں پاؤں داہنی طرف نکال کر بیٹھنا چاہئے۔

وضاحت:
نماز کی ادائیگی کے طریقہ سے متعلق مختلف فیہ مسائل میں ۸۰ ہجری میں پیدا ہوئے حضرت امام ابوحنیفہؒ اور علماء احناف کی قرآن وحدیث کی روشنی پر مبنی رائے کو اختیار کیا گیا ہے۔ ان مسائل کے دلائل کے لئے علماء احناف کی کتابوں کا مطالعہ کریں۔
Dr. Mohammad Najeeb Qasmi
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

وحدثنا يحيى بن حبيب الحارثي ، حدثنا خالد يعني ابن الحارث ، حدثنا قرة ، حدثنا ابو الزبير ، حدثنا سعيد بن جبير ، حدثنا ابن عباس ، ان رسول الله صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏” جمع بين الصلاة في سفرة سافرها في غزوة تبوك، ‏‏‏‏‏‏فجمع بين الظهر والعصر، ‏‏‏‏‏‏والمغرب والعشاء “، ‏‏‏‏‏‏قال سعيد:‏‏‏‏ فقلت لابن عباس:‏‏‏‏ ما حمله على ذلك؟ قال:‏‏‏‏ اراد ان لا يحرج امته.
جبیر کے فرزند سعید نے کہا کہ سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے نمازوں کو ایک سفر میں جمع کیا، جس میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم غزوۂ تبوک کو گئے تھے غرض ملا کر پڑھی ظہر اور عصر اور مغرب اور عشاء۔ سعید نے کہا کہ میں نے سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما سے پوچھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا کیوں کیا؟ انہوں نے کہا: تاکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی امت کو تکلیف نہ ہو۔  (صحیح مسلم حدیث نمبر: 1630)

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ حضور اکرم  صلی اللہ علیہ وسلم  نے مدینہ منورہ میں ظہر وعصر کو ملاکر پڑھا؛ حالانکہ یہ کسی خطرہ یا سفر کی حالت نہ تھی۔ حضرت ابو الزبیر  کہتے ہیں کہ میں نے حضرت سعید سے پوچھا کہ آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے ایسا کیوں کیا؟ حضرت سعید نے جواب دیا کہ میں نے بھی یہ بات حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما سے پوچھی تھی تو انہوں نے بتایا کہ آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  کا مقصد تھا کہ لوگ تنگی میں مبتلا نہ ہوں۔ (صحیح مسلم، الجمع بین الصلاتین فی الحضر)

اس حدیث میں جمع بین الصلاتین سے مراد ظاہری جمع ہے یعنی ظہر کو اس کے آخر وقت میں اور عصر کو اس کے اول وقت میں پڑھا۔ محدثین کرام حتی کہ علامہ شوکانی  نے بھی اس حدیث سے جمع صوری ہی مراد لیا ہے۔
جو لوگ اس حدیث سے جمع کو مطلقاً جائز سمجھتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ یہ جائز ہے بشرطیکہ عادت نہ بنا لے۔ فتح الباری میں ہے کہ ابن سیرین رحمہ اللہ، ربیعہ، ابن منذر اور فقال الکبیر کا یہی مذہب تھا۔ خطابی رحمہ اللہ نے بعض اہل حدیث کی طرف منسوب کیا ہے۔ جمہور کا مذہب یہ ہے کہ بغیر کسی عزر کے جائز نہیں ہے۔
اللہ تعالیٰ ہم سب کو وقت پر نماز کا اہتمام کرنے والا بنائے اور نماز میں کوتاہی کی تمام شکلوں سے حفاظت فرمائے، آمین
………………………………………………
جمع بین الصلاتین:
قرآن وحدیث کی روشنی میں امت مسلمہ کا اتفاق ہے کہ ہر نماز کو اس کے وقت پر ہی ادا کرناچاہیے۔ نماز کی وقت پر ادائیگی سے متعلق آیات قرآنیہ اور متواتر احادیث کی روشنی میں مفسرین، محدثین، فقہاء وعلماء کرام کا اتفاق ہے کہ فرض نماز کو اس کے متعین اور مقرر وقت پر پڑھنا فرض ہے اور بلا عذر شرعی مقرر وقت سے مقدم وموٴخر کرنا گناہ کبیرہ ہے۔
نماز کو وقت پر پڑھنے سے متعلق چند آیات:
اِنَّ الصَّلَاةَ کَانَتْ عَلَی الْمُوٴمِنِیْنَ کِتَاباً مَّوْقُوْتاً (سورة النساء ۱۰۳)بے شک نماز اہلِ ایمان پرمقررہ وقتوں میں فرض ہے۔
حَافِظُوا عَلَی الصَّلَوَاتِ (سورة البقرة ۲۳۸) نمازوں کی حفاظت کرو۔ مفسر قرآن علامہ ابن کثیر  اس آیت کی تفسیر میں تحریر فرماتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ وقت پر نمازوں کو ادا کرنے کی حفاظت کا حکم فرماتے ہیں۔
وَالَّذِیْنَ ہُمْ عَلَی صَلَوَاتِہِمْ یُحَافِظُوْنَ (سورة المعارج۳۴) اور وہ لوگ اپنی نمازوں کی حفاظت کرتے ہیں۔ مفسر قرآن ابن کثیر  اس آیت کی تفسیر میں تحریر فرماتے ہیں کہ وہ لوگ نماز کے اوقات، ارکان، واجبات اور مستحبات کی حفاظت کرتے ہیں۔
فَوَیلٌ لِّلْمُصَلِّیْنَ الَّذِیْنَ ہُمْ عَنْ صَلَاتِہِمْ سَاہُوْنَ (سورة الماعون۴ و ۵)سو ان نمازیوں کے لیے بڑی خرابی ہے جو اپنی نماز میں کاہلی کرتے ہیں۔ مفسرین نے تحریرکیا ہے کہ وقت پر نماز کی ادائیگی نہ کرنا اس آیت کی وعید میں داخل ہے۔
ہر نماز کو اس کے وقت پر ہی ادا کرناچاہیے  یہی شریعت اسلامیہ میں مطلوب ہے، پوری زندگی اسی پر عمل کرنا چاہیے اور اسی کی دعوت دوسروں کو دینی چاہیے؛ لیکن اگر کوئی شخص سفر یا کسی شرعی عذر کی وجہ سے دو نمازوں کو اکٹھا کرنا چاہے تو اس سلسلہ میں فقہاء وعلماء کرام کا اختلاف ہے۔ فقہاء وعلماء کرام کی ایک جماعت نے سفر یا موسلادھار بارش کی وجہ سے ظہر وعصر میں جمع تقدیم وجمع تاخیر اسی طرح مغرب وعشاء میں جمع تقدیم وجمع تاخیر کی اجازت دی ہے؛ لیکن فقہاء وعلماء کرام کی دوسری جماعت نے احادیث نبویہ کی روشنی میں حقیقی جمع کی اجازت نہیں دی ہے۔ ۸۰ ہجری میں پیدا ہوئے مشہور تابعی وفقیہ حضرت امام ابوحنیفہ رحمة اللہ علیہ کی بھی یہی رائے ہے۔ ہندوپاک کے علماء کا بھی یہی موقف ہے۔

فقہاء وعلماء کی یہ جماعت، اُن احادیث کو جن میں جمع بین الصلاتین کا ذکر آیا ہے، ظاہری جمع پر محمول کرتی ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ظہر کی نماز آخری وقت میں اور عصر کی نماز اوّلِ وقت میں ادا کی جائے، مثلاً ظہر کا وقت ایک بجے سے چار بجے تک ہے اور عصر کا وقت چار بجے سے غروب آفتاب تک تو ظہر کو چار بجے سے کچھ قبل اور عصر کو چار بجے پڑھا جائے۔ اس صورت میں ہر نماز اپنے اپنے وقت کے اندر ادا ہوگی؛ لیکن صورت وعمل کے لحاظ سے دونوں نمازیں اکٹھی ادا ہوں گی، اسی طرح مغرب کی نماز آخری وقت میں اور عشاء کی نماز اوّلِ وقت میں پڑھی جائے، اس کو جمع ظاہری یا جمع صوری یا جمع عملی کہا جاتا ہے۔ اس طرح تمام احادیث پر عمل بھی ہوجائے گا اور قرآن وحدیث کا اصل مطلوب ومقصود (یعنی نمازکی وقت پر ادائیگی) بھی ادا ہوجائے گا۔

بعض آثار صحابہ و تابعین سے بھی بعض لوگوں نے جمع مطلق پر استدلال کیا ہے۔ لیکن ان آثار سے حجت نہیں پکڑنی چاہیے اس لیے کہ اس مسئلہ میں اجتہاد کی گنجائش نہیں ہے۔
بعض لوگ اس جمع کو صوری کہتے ہیں۔ اس کا ثبوت حدیث میں ہے۔ نسائی کی روایت میں ابن عباس رضی اللہ عنہ نے صراحۃً فرمایا:
صَلّیْتُ مَعَ رَسُوْلَ اللّٰہ ﷺ بِالْمَدِیْنَۃِ ثَمَانِیًا جَمْعًا وَّسَبْعًا جَمْعًا اَخّرَا لظَّھَر وَعَجَّلَ الْعَصْرَ وَاَخّرَ الْمَغْرِبَ وَعَجّلَ الْعِشَائَ۔
یعنی آپ کے ساتھ میں نے آٹھ رکعت بھی اکٹھی پڑھیں اور سات بھی وہ یوں کہ ظہر کو مؤخر کیا اور عصر کو مقدم اسی طرح مغرب کو ذرا دیر سے اور عشاء کو جلدی پڑھا۔
الغرض تمام دلائل کو سامنے رکھ کر یہ واضح ہوا کہ حضر میں بلا عذر جمع بین الصلوتین جائز نہیں اور آپﷺ نے جو جمع کی وہ صوری تھی جو اس جمع کا قائل ہے وہ بھی اسے عادت بنا لینے کو جائز نہیں کہتا۔ ثابت ہوا کہ جمہور کے مذہب پر عمل ہونا چاہیے۔ واللہ اعلم بالصواب


————————————————–

دونمازوں کو ایک کے بعد ایک ملا کر پڑھتے والوں کے دلائل-1

جو لوگ (دو)نمازوں کو ایک کے بعد ایک ملا کر پڑھتے ہیں اور وہ بھی قرآن و سنت سے دلائل دیتے ہیں- یہ ایک علمی تحقیق ہے لہٰذا ان کا پوانٹ آف ویو بھی معلوم کرنے میں کوئی حرج نہیں- ان کے دو مضامین پیش ہیں-
سورہ بنی اسرائیل آیت نمبر78 میں ارشاد باری تعالیٰ ہے:
اَقِمِ الصَّلٰوةَ لِدُلُوْكِ الشَّمْسِ اِلٰى غَسَقِ الَّيْلِ وَ قُرْاٰنَ الْفَجْرِ١ؕ اِنَّ قُرْاٰنَ الْفَجْرِ كَانَ مَشْهُوْدًا(قرآن الحکیم 17:78 )

” آپ سورج ڈھلنے سے لے کر رات کی تاریکی تک (ظہر، عصر، مغرب اور عشاء کی) نماز قائم فرمایا کریں اور نمازِ فجر کا قرآن پڑھنا بھی (لازم کر لیں)، بیشک نمازِ فجر کے قرآن میں (فرشتوں کی) حاضری ہوتی ہے (اور حضوری بھی نصیب ہوتی ہے)“(قرآن الحکیم 17:78 )

شیعہ حضرات روزانہ کی پنجگانہ نمازیں واجب مانتے اور جانتے ہیں۔ اگرچہ وہ اکثر ظہر اور عصر کی نماز میں اکٹھا ملا کر ظہر کی نماز کے اول وقت سے نماز عصر کے آخری وقت تک پڑھتے ہیں۔ وہ مغرب اور عشاء کی نمازوں کو بھی اسی طرح ملا کر پڑھتا ایک بعد دیگرے پڑھنا جائز سمجھتے ہیں۔
یہ عمل قرآن کریم اور مستند احادیث کے عین مطابق ہے۔
حنفی فقہ کو چھوڑ کر، سنّی فقہ اس کی اجازت دیتا ہے کہ واجب نمازوں کو ملا کر پڑھا جاسکتا ہے۔ (انعام، بیان السلاطین)۔ اگر حالات موافق نہ ہوں جیسے۔ بارش، سفر،خوف اور دوسرے ہنگامی حالات میں۔ حنفی فقہ واجب نمازوں کو ملا کر پڑھنے کی قطعی اجازت نہیں دیتا۔ سوائے دوران حج المذدلفہ میں۔
مالکی شافعی اور حنبلی فقہ اس بات پر متفق ہے کہ سفر میں واجب نمازوں کو ملاکر پڑھا جاسکتا ہے۔ لیکن اور دوسرے وجوبات پر آپس میں اختلاف ہے۔
شیعہ کا جعفری فقہ اس بات کی قطعی اجازت دیتا ہے کہ واجب نمازوں کو کسی خاص وجہ کے بغیر ایک ساتھ پڑھا جاسکتا ہے۔
اوقات نماز بروئے قرآن مجید
قرآن کریم کے مشہور مفسّر امام فخر الدین رازی نے سورہ نمبر ۷۱، آیت ۸۷ کے بارے میں لکھا۔ اور ہم یہ مانتے ہیں کہ اندھیرا (غسق) اس وقت کو مراد یعنی جب اندھیرا پہلے پہل ظاہر ہوتا ہے پھرغسق سے مراد مغرب کی ابتداء سے اس بنیاد پر تین اوقات :
۱۔ دوپہر کا وقت ،
۲ مغرب کی ابتداء کا وقت اور
۳۔ فجر کا وقت۔
اس کا مطلب یہ ہوا کہ دوپہر کا وقت ظہر اور عصر کا ہے۔ اور یہ وقت ان دونوں نمازوں میں تقسیم ہوجاتا ہے۔ اسی طرح ابتدائے مغرب کا وقت مغرب اور عشاء کے اوقات ہیں۔ اسی طرح یہ وقت بھی ان دونوں نماز میں مشترک ہوجاتا ہے۔
اس کا مطلب یہ ہوا کہ ظہر اور عصر اور مغرب و عشاء کا ملانا ہر جگہ اور ہر موسم میں جائز ہے۔اگرچہ یہ ثابت ہے کہ ان نمازوں کو ایک ساتھ ملا کر پڑھنا جب کہ انسان اپنے گھر پر ہوں بغیر کسی خاص وجہ کے جائز نہیں مانا جاسکتا ہے۔ لہٰذا یہ ماننا پڑے گا کہ یہ نظریہ قائم ہوسکتا ہے۔ بشرط یہ کہ حالت سفر یا بارش میں ہو۔
(فخر الدین رازی، التفسیر الکبیر، جلد ۵، صفحہ ۸۳۴)
ہم آگے چل کر یہ ثابت کردیں گے کہ بغیر کسی خاص وجہ کے بھی نمازوں کو ایک ساتھ پڑھا جاسکتا ہے یہ تو ظاہر ہوگیا ہے کہ واجب نمازوں کے اوقات صرف تین ہی ہیں۔
۱۔ دو فرض نمازوں کے اوقات:
دوپہر میں ظہر اور عصر نمازوں کے لئے جو ان دونوں میں مشترک ہے۔
۲۔ اور دو فرض نماز مغرب اور عشاء کے لئے لہٰذا غروب آفتاب شام اور رات میں جو کہ ان دونوں میں مشترک ہے۔
۳۔ اور نماز فجر کا وقت صبح ہے۔ جواس کے لئے مخصوص ہے۔
کیا پیغمبر (وں) نے ملا کر نماز میں پڑھیں۔
ابن عبّاس سے روایت ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم) مدینہ منوّرہ میں سات رکعتی اور آٹھ رکعتیں یعنی دوپہر اور سہ پہر کی ظہر اورعصر کی نمازیں (آٹھ رکعت) اور شام اور رات کی نمازیں یعنی مغرب اور عشاء (سات رکعت کو) ایک ساتھ پڑھیں۔
(صحیح بخاری (انگریزی ترجمہ) جلد ۱، کتاب، ۰۱، نمبر ۷۳۵، صحیح مسلم (انگریزی ترجمہ) کتاب الصلوةٰ، کتاب ۴ باب ۰۰۱، نمازوں کا ملانا، جب وہ شخص وطن میں ہو۔ حدیث نمبر ۲۲۵۱)
عبداللہ بن شقیق نے بتایا کہ ابن عباس ہم لوگوں سے دوپہر میں ایک دن مخاطب ہوئے (دوپہر کی نماز کے بعد) حتّٰی کہ سورج ڈوب گیا اور تارے نکل آئے اور لوگ کہنے لگے نماز، نماز ، بنی تمیم کا ایک شخص آیا اور نہ وہ ڈھیلا پڑا اور نہ ہی واپس ہوا لیکن وہ نماز نماز پکارتا رہا۔
ابن عباس نے کہا تم اپنی ماں سے محروم ہوجاؤ۔ کیا تم ہم کو سنّت سکھا رہے ہو میں رسول خدا صلی اللہ علیہ و آلہ و سلّم کو نمازوں کو ایک ساتھ ملا تے ہوئے دیکھا ہے دوپہر کی نماز (ظہر) اور سہ پہر کی نماز (عصر) کو اور شام کی نماز مغرب اور رات  کی نماز عشاء کو۔
عبداللہ ابن شقیق نے کہا کہ میرے دل میں کچھ شک ہوا۔ چنانچہ ابوہریرہ کے پاس آیا اور اس بارے میں دریافت کیا۔ اور انھوں نے اس کی تصدیق کردی۔
(صحیح مسلم (انگریزی ترجمہ) کتاب الصلوة، جلد ۴، باب ۰۰۱، نمازوں کو ملانا جب نمازی ٹھہرا ہوا ہو (وطن میں ہو) حدیث نمبر ۳۲۵۱، ۴۲۵۱)
مگر کیا یہ سفر،خوف یا بارش کی وجہ سے تھا؟
رسول خدا (ص) کی کئی حدیثیں اس بات کی مظہر ہیں کہ آپ نمازوں کو ملا کر اکٹھا پڑھا کرتے تھے بغیر کسی خاص وجہ کے۔
رسول اللہ(ص) نے مدینہ کے قیام کے دوران، نہ کہ سفر میں، سات اور آٹھ رکعتیں ملا کر پڑھیں (یہ ظاہر کرتا ہے کہ ۷ رکعت مغرب اور عشاء کی ملاکر اور رکعت ظہر عصر کی ملا کر پڑھیں۔)
(احمد بن حنبل ، المسند، جلد ۱، صفحہ ۱۲۲)
رسول خدا (ص) نے ظہر اور عصر کی نمازوں کو ملاکر اور مغرب اور عشاء کی نمازوں کو ملا کر ہی پڑھا بغیر کسی خاص وجہ کے نہ تو خوف کا موقع تھااور نہ ہی سفر میں تھے۔
(ملک ابن انس، الموطّہ، جلد ۱، صفحہ ۱۶۱)
بے شک بعض احادیث میں ہمیں بتا گیا ہے کہ نبی اللہ کا یہ عمل خاص کر اپنی امت کی سہولت اور آسانی کے لئے تھا۔
ابن عباس نے ہمیں بتایا ہے کہ رسول اللہ کا ظہر اور عصر کی نمازوں کا ملانا اور غروب آفتاب کی نماز کو رات کی نماز کا ملا کر پڑھنا مدینہ منوّرہ میں کسی خاص وجہ جیسے خوف و ڈر یا خطرہ اور بارش کے تھا۔
اور ولی# کے ذریعے بیان کی گئی حدیث ان الفاظ میں ہے ”میں نے ابن عباس سے پوچھا کہ کس چیز نے رسول اللہ کو ایسا کرنے کے لئے اکسایا۔ انھوں نے بتایا تاکہ ”رسول اللہ کی امّت کوغیر ضروری تکلیف اور سختی نہ محسوس ہو۔“
(صحیح مسلم (انگریزی ترجمہ) کتاب الصّلوٰة ، جلد ۴،باب ۰۰۱، نمازوں کا ملا کر پڑھنا جبکہ متوکن ہوں۔ حدیث نمبر ۰۲۵۱، سنن الترمذی جلد ۱، صفحہ ۶۲)
اللہ کے پیغمبر (ص) نے دو پہر اور سہ پہر (ظہر اور عصر) کی نمازوں کو ایک ساتھ ملا کر مدینہ منوّرہ میں پڑھیں جب کہ خطرہ یا خوف کا کوئی محل نہیں تھا اور نہ ہی بارش کا وقت تھا۔ ابو زبیر نے کہا کہ میں نے سعید سے دریافت کیا (جو کہ ایک محدّث تھے) کہ آپ نے ایسا کیوں کیا۔ انھوں نے بتایا کہ میں نے ابن عباس سے پوچھا اورانھوں نے بنایا کہ رسول اللہ چاہتے تھے کہ ان کی امت میں کسی کو غیر ضروری تکلیف نہ ہو۔
(صحیح مسلم، انگریزی ترجمہ) کتاب الصلوٰة، جلد ۴، باب ۳، نمازوں کو ملا کر پڑھنا، جب کہ وہ ساکن ہو، حدیث نمبر ۶۱۵۱)
اگرچہ اس کی اجازت ہو پھر بھی کیوں عمل کریں۔
کوئی یہ نہیں کہتا کہ ظہر اور عصر کی نمازیں یا مغرب اور عشاء کی نماز میں الگ الگ نہیں پڑہی جاسکتی ۔ یہ نمازیں الگ یا ملا کر ایک ساتھ پڑھی جاسکتی ہیں۔
لیکن یہ سوچنے کی بات ہے کہ اللہ کے رسول کا یہ عمل کہ ان نمازوں کو ملا کر پڑھتے اس میں نہ صرف رسول کا اپنا عمل بلکہ پروردگار عالم کی بھی ایما اس میں شامل ہے۔ تاکہ امت مسلّمہ کو آسانی اور سہولت حاصل ہو۔
﴿ان ہی اچھی وجوہات کی بنا پر شیعوں میں ملاکر نماز پڑھنے کا چلن ہوگیا۔﴾
عوام اکثر اپنے کاموں میں مصروف ہوجاتے ہیں اور ان کی اپنی ضرورتیں رہتی ہیں خاص کر ایسے ملک میں جہاں امّت مُسلمہ کے نماز پڑھنے اور عبادت کرنا مناسب اور صحیح وقت پر ممکن نہیں اور نہ ہی ایسی کوئی آسانی ہے۔ بہت ساری ذمّہ داریاں اور کام ایسے ہوتے ہیں لگاتار اور مسلسل ڈیوٹی کرنا پڑتا ہے۔ ایسے مواقع کے لئے ان کی آسانی غیر ضروری شدّت کو ہٹانے اور دونوں وقتوں کی نماز پڑھ سکنے کی آسانی کے لئے ایک ساتھ نماز ادا کرنے میں کتنی سہولت ہوتی ہے۔ یہ اچھی طرح سمجھا جا سکتا ہے۔
جب لوگ دور اور نزدیک سے ایک وقت نماز کے لئے نکال سکتے ہیں تو اسی وقت دونوں نمازیں ادا کی جاسکتی ہیں۔ اس لئے کہ اس کی اجازت ہے۔
اور وہ وقت جماعت کا ہوتو دونوں نماز یں باجماعت مل جاتی ہیں۔ جس کی اپنی اہمیت اور بے انتہا ثواب ہے۔
اس لئے شیعہ حضرات دو نمازوں کو ایک وقفہ میں پڑھتے ہیں جس کی میعاد محدود نہیں بلکہ نسبتاً نہیں ہے۔ (مقررہ اوقات کے درمیان)
یہ اکثر دیکھا گیا ہے۔ اہل سنّی حضرات جو جمعہ کی جماعت میں بڑی پابندی سے اکٹھا ہوتے ہیں۔ لیکن عصر کی نماز باجماعت اکثر نہیں پڑھ پاتے ہیں۔ مختلف وجوہات کی بنا پر۔
لیکن شیعہ حضرات جمعہ کی جماعت میں شامل رہتے ہیں اور چونکہ عصر کا وقت بھی ہوجاتا ہے اس لئے باجماعت اس نماز کو بھی پڑھ کر ثواب کمالیتے ہیں۔
اس حقیقت کو بھی مدّ نظر رکھنا چاہیئے کہ عام طور پر سنّی حضرات اس عمل پر قائم نہیں ہیں۔ شیعہ حضرات یہ محسوس کرتے ہیں کہ اس پر قائم رہیں۔ اور سنّت رسول کو زندہ رکھیں۔
ہمیں اپنے بچوں اور دوسرے مسلم حضرات پہ زور دے کر کہنا ہے کہ ظہر، عصر اور مغرب و عشاء کی نمازوں کو ملا کر نہ صرف جائز ہی ہے۔بلکہ عین سنّت رسول ہے۔
حاصل کلام
ظہر ، عصر اور مغرب و عشاء کی نمازوں کو ملاکر ایک ساتھ پڑھنا نہ صرف قرآن حکیم کے عین مطابق ہے۔ بلکہ سنت رسول اور احادیث کی روشنی میں جائز اور حکم کے مطابق ہے۔ اس کے علاوہ یہ اللہ اور رسول کی طرف سے امت کی سہولت کے لئے ہے۔
اہل سنّت کے ان حدیثوں اور اللہ کے نہ ماننے سے ہماری عبادت اور زندگیوں پر کچھ اثر نہیں پڑتا ہے۔
جیسا کہ مشہور سنّی عالم اور صحیح مسلم کے مفسر النوائی لکھتے ہیں۔
”اگر کوئی سنّت کو مُسلّم الثبوت مان لیتے ہیں۔ اس کو اس لئے نہیں چھوڑ سکتے کہ کچھ لوگ یا سبھی لوگ اس حدیث کو نہیں مانتے ۔“
(انوائی: شرح صحیح مسلم (بیروت ۲۹۳۱، ہجری) جلد صفحہ ۶۵)
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

دونمازوں کو ایک کے بعد ایک ملا کر پڑھتے والوں کے دلائل-2

قرآن مجید کی ظاھری آیات اس پر دلالت کرتی ہیں کہ نماز پڑھنے کا وقت محدود و مقرر ہے:اللہ کا ارشاد ہے:
اَقِمِ الصَّلٰوةَ لِدُلُوْكِ الشَّمْسِ اِلٰى غَسَقِ الَّيْلِ وَ قُرْاٰنَ الْفَجْرِ١ؕ اِنَّ قُرْاٰنَ الْفَجْرِ كَانَ مَشْهُوْدًا(قرآن الحکیم 17:78 )(۱)
(اے رسول)سورج کے ڈھلنے سے رات کے اندھیرے تک نماز (ظھر، عصر، مغرب، عشاء) پڑھا کرو اور نماز صبح (بھی)کیونکہ صبح کی نماز پر (دن اور رات کے فرشتوں کی) گواھی ھوتی ہے۔ “(قرآن الحکیم 17:78 )
آیت کریمہ میں نماز کے تین اوقات بیان کئے گئے ہیں اوروہ تین اوقات نمازیہ ہیں:
۱۔ ” دلوک الشمس”( سورج ڈھلنے کا وقت)یہ نماز ظھروعصرکا مشترک اورمخصوص وقت ہے۔
۲۔ “الیٰ غسق الیل”(رات کے اندھیرے تک)یہ نماز مغرب و عشاء کامشترک و مخصوص وقت ہے۔
۳۔ “قرآن الفجران قرآن الفجرکان مشھودا”، اس سے نماز فجرکا وقت مراد ہے۔ پس اس آ یت شریفہ میں وقت کی تعیین کے سلسلہ میں واضح طور پرحکم بیان کر دیا گیا ہے کہ نماز کے لئے یہ تین اوقات مقرر ہیں۔
یہ ایک کلی اور عام حکم ہے جس کا آیت مذکورہ سے استفادہ ھوتا ہے۔
دوسری دلیل: سنت رسول(ص)
پیغمبر اکرم(ص) سے بھت زیادہ ایسی روایات وارد ھوئی ہیں جو واضح طور پر دلالت کرتی ہیں کہ ظھر و عصر، مغرب و عشاء کو ایک ساتھ جمع کرنا جائز ہے۔چاھے وہ جمع تقدیمی ھوجیسے ظھر وعصر کے درمیان اس طرح جمع کرناکہ نماز ظھر کو بجا لانے کے فوراََ بعد نماز عصر کو ادا کیا جائے،یا جمع تاخیری ھو،جیسے نماز ظھر کو تاخیر اور دیر سے نماز عصر کے مخصوص وقت سے پھلے ادا کرنا اور پھر نماز عصرکو بجا لانا۔
اھلسنت کی معتبر احادیث کی کتابوں میں رسول اکرم(ص) سے نقل شدہ روایات سے ان دونوں قسم کی جمع (تقدیمی وتاخیری)کا استفادہ ھوتا ہے۔بطور نمونہ کچھ روایات درج ذیل ہیں:

النووی کی صحیح مسلم جلد۵ ص۲۱۳،باب الجمع بین الصلاتین، میں درج ذیل احادیث ذکر ھوئی ہیں:
۱۔ یحیٰ بن یحیٰ نے ھمیں بتایا کہ میں نے مالک کے سامنے اُس حدیث کی قراٴت کی جسے زبیر نے سعید ابن جبیرسے،اور انھوں نے ابن عباس سے نقل کیا ہے کہ ابن عباس کھتے ہیں :رسول خدا(ص) نے نماز ظھروعصر،اور مغرب و عشاء بغیر کسی خوف اور سفر کے اکٹھا ادا کی ہے۔
۲۔احمد بن یونس اور عون بن سلام، دونوں نے زھیر سے نقل کیا ہے اور ابن یونس یہ کھتے ہیں کہ زھیر ابو الزبیر نے سعید ابن جبیر سے اور انھوں نے ابن عباس سے نقل کیا ہے ابن عباس کھتے ہیں کہ : پیغمبر اکرم(ص) نے مدینہ میں بغیر کسی خوف و سفر کے نماز ظھرو عصر کو ایک ساتھ انجام دیا۔ابو الزبیر نے کھا کہ میں نے سعید ابن جبیر سے سوال کیا کہ : پیغمبر اکرم(ص) نے ایساکیوں کیا؟تو سعید ابن جبیر نے جواب میں کھا :میں نے یھی سوال ابن عباس سے کیا تو انھوں نے جواب دیاکہ: پیغمبر اپنی امت کوسختی اورتنگی میں مبتلا نھیں کرنا چاھتے تھے۔
۳۔ ابو الربیع الزھرانی نے حمابن زید سے،انھوں نے عمر بن دینار سے،اور انھوں نے جابر بن زید سے ،اور انھوں نے ابن عباس سے یہ حدیث نقل کی ہے ابن عباس کھتے ہیں: پیغمبر اکرم(ص) نے مدینہ میں ظھروعصر،کی آٹھ رکعات اور مغرب وعشاء کی سات رکعات ایک وقت میں انجا م دی ہیں۔
۴۔ بخاری نے اپنی صحیح میں باب” العشاء والعتمہ“ میں اپنے قول کو کچھ اس طرح بیان کیا ہےکہ بخاری نے بطور مرسل(با حذف سلسلہ سند)ابن عمیر،ابوا یوب اورابن عباس سے نقل کیا ہے : رسول اکرم(ص) نے مغرب و عشاء کی نماز ایک ساتھ پڑھی ہے۔(۲)
۵۔ جابر بن زید ابن عباس سے نقل کرتے ہیں کہ انھوں نے کھا :کہ پیغمبر اکرم(ص) نے مغرب کی سات رکعات اور عشاء کی آٹھ رکعات کو ایک وقت میں انجام دیا ہیں۔(۳)
۶۔ ترمذی نے سعید ابن جبیر کی ابن عباس سے نقل کردہ روایت ذکر کی ہے؛ ابن عباس کھتے ہیں: پیغمبر اکرم(ص) نے مدینہ میں بغیر کسی خوف اوربغیر بارش کے نماز ظھر و عصر،مغرب وعشاء کو ایک ساتھ پڑھا،ا س کا بعد وہ کھتے ہیں کہ جب ابن عباس سے یہ پوچھا گیا کہ پیغمبر(ص) نے ایسا کیوں کیا ؟تو انھوں نے جواب دیا پیغمبر چاھتے تھے کہ ان کی امت کے لئے عسر و حرج لازم نہ آئے۔(۴)
۷۔ نسائی نے اپنی سنن میں سعید ابن جبیر کی ابن عباس سے نقل کردہ روایت کو ذکر کیا ہے کہ پیغمبر اکرم(ص) مدینہ میں بغیر کسی خوف وباران کے ظھر و عصر،مغرب وعشاء کی نمازوں کو ایک ساتھ ادا کرتے تھے۔جب اُن سے پوچھا گیا؟آپ ایسا کیوں کرتے ہیں تو ابن عباس نے جواب دیا :تاکہ اُن کی اُمت مشقت و سختی میں مبتلا نہ ھو۔(۵)
۸۔ نسائی نے جابر بن زید کی ابن عباس کے واسطہ سے نقل کردہ حدیث بھی ذکر کی ہے؛کہ بصرہ میں پیغمبر اکرم(ص) نے بغیر کسی عذر کے نماز ظھر وعصر،مغرب و عشاء کو بغیر کسی فاصلہ کے ادا کیا،اور ابن عباس کو یہ خیال آیا کہ انھوں نے مدینہ میں پیغمبر(ص)کی اقتداء میں نماز ظھرو عصر کے آٹھ سجدوں کو پے در پے ادا کیا ہے۔(۶)
۹۔ عبدالرزاق نے عمرو بن شعیب، اور انھوں نے عبداللہ بن عمر سے نقل کیا ہے عبداللہ بن عمر کھتے ہیں “پیغمبر اکرم (ص) نے ھمارے سامنے بغیرسفر(حالت حضر) کے ظھر و عصر کی نمازوں کو ایک ساتھانجام دیاہے توایک شخص نے ابن عمر سے پوچھا؟ آپ کی نظر میں پیغمبر(ص)نے ایسا کیوں کیا؟تو اُنھوں نے جواب دیا تا کہ امت محمدی(ص) کو حرج و مشقت کا سامنا نہ کرنا پڑے، خواہ اس کی سھولت وآسانی سے کسی ایک فرد ھی کو فائدہ پھونچے”۔(۷)

۱۰۔ البزار نے اپنی مسند میں ابو ھریرہ سے نقل کیا ہے کہ ابو ھریرہ نے کھا: پیغمبر اکرم(ص) نے مدینہ میں بغیر کسی خوف کے دو نمازوں کو ایک ساتھ جمع کیا ہے۔(۸)
۱۱۔ الطبرانی نے اپنی سند سے عبداللہ بن مسعود کی نقل کردہ روایت کا تذکرہ کیا ہے کہ جب پیغمبر(ص) نے مدینہ میں ظھر و عصر ، مغرب و عشاء کی نمازوں کو ایک ساتھ انجام دیا تو آپ سے سوال کیا گیا کہ آپ نے ایسا کیوں کیا ہے؟تو اللہ کے رسول (ص)نے جواب دیا: میری اُمت سختی اور مشقت میں مبتلاء نہ ھو۔(۹)
تیسری دلیل: فضیلت کے وقت نماز ادا کرنا مستحب ہے
ھر نماز کا ایک خا ص وقت ہے جس میں نماز ادا کرنا مستحب ہے اور اس وقت کو فضیلت کا وقت کھا جاتا ہے۔مثلاََ نماز ظھر کی فضیلت اور اس کے استحباب کا وقت ” سورج کے زوال کے بعد جب شاخص کا سایہ اُس کے برابر ھو جائے”۔اسی طرح “نماز عصر کی فضیلت کا وقت ،جب شاخص کا سایہ اس کے دو برابر ھو جائے”۔
روایات کے مطابق یہ وہ اوقات ہیں جن میں مومن کے لئے فضیلت کے اوقات میں نماز بجا لانا مستحب ہے لیکن مسلمان کے لئے نماز عصر اور عشاء کوتاخیر و دیر سے پڑھنا جائز ہے یعنی اُن کے فضیلت کے اوقات میں ادا نہ کرے،تو اسکی نماز صحیح ہے۔ زیادہ سے زیادہ یہ کھا جا سکتا ہے کہ اس نے ان نمازوں کوفضیلت کے وقت ادا نھیں کیا جو ایک مستحب عمل تھا۔مثلاََ جیسے کوئی شخص نماز عصر کو اس کے فضیلت کے وقت (کہ جب شاخص کا سایہ اس چیز کے دو گنا ھو جائے)بجا نہ لائے۔
لیکن کچھ اسلامی فرقوں نے نماز کو اُن کے متعارف یعنی فضیلت کے اوقات میں نماز بجا لانے کو ضروری سمجھ لیا ہے جبکہ اس سے عسرو حرج اور مشقت لازم آتا ہے جس کی احادیث میں نفی کی گئی ہے۔
جیسا کی سنن ترمذی میں سعید ابن جبیر کی ابن عباس سے نقل کردہ روایت ذکر ھوئی ہے: پیغمبر اکرم(ص) نے مدینہ میں کسی خوف و بارش کے بغیر نماز ظھر و عصر، مغرب و عشاء کو ایک ساتھ پڑھا ۔اور جب ابن عباس سے پوچھا گیا کہ آپ نے ایسا کیوں کیا؟ تو انھو ں نے جواب دیا: پیغمبر(ص) چاھتے تھے کہ ان کی امت کے لئے آسانی ھو،اور وہ عسر و حرج کا سامنا نہ کرے۔(۱۰)
دوسری بات یہ ہے کہ وقت کی تقسیم بندی کچھ اس طرح ہے:
الف: نماز ظھرو عصرکا مخصوص وقت
نماز ظھر کا مخصوص وقت، سورج کے زوال کے بعد اتنی مقدار میں ہے کہ جس میں انسان ظھر کی چار رکعت نماز ادا کر سکے اور نماز عصر کا مخصوص وقت ،سورج کے غروب ھونے سے پھلے اتنی مقدار میں ہے کہ جس میں عصر کی چار رکعت ھی بجا لائی جا سکے ۔

نماز ظھر و عصر کا مشترک وقت
زوال کا وقت ھوتے ھی ظھر کی چار رکعات ادا کرنے سے ظھر و عصر کا مشترک وقت شروع ھو جاتا ہے۔ اور مغرب کی نماز کا وقت شروع ھو جانے کے ساتھ ھی تین رکعات ادا کرنے کے بعد مغرب و عشاء کا مشترک وقت شروع ھو جاتا ہے۔ان ھی اوقات سے ھم نمازوں کے درمیان جمع کرنے کے جواز کو سمجھتے ہیں ۔
پس اگرنماز ظھر کو بجا لانے کے فوراََ بعد نماز عصر کو ادا کیا جائے ،اور اسی طرح نماز مغرب کو ادا کرنے کے فوراََ بعد عشاء کو بجا لایا جائے، تو ایسی جمع بین الصلاتین کو جمع تقدیمی کا نام دیا جاتا ہے۔اور اسی طرح نماز ظھر کو کچھ تاخیر سے نماز عصر کے مخصوص وقت سے پھلے ادا کرنا اور پھر نماز عصر کو بجا لانا جائز ہے،البتہ ایسی “جمع بین الصلاتین ” کو جمع تاخیری کا نام دیا جاتا ہے۔اور درجہ ذیل آیت سے اسی جمع کا استفادہ ھوتا ہے:
“اقم الصلاة لدلوک الشمس الی غسق الیل وقرآن الفجر اَن قرآن الفجرکان مشھوداََ”(۱۱)
(اے رسول)سورج کے ڈھلنے سے رات کے اندھیرے تک نماز (ظھر، عصر، مغرب، عشاء)پڑھا کرو اور نماز صبح (بھی)کیونکہ صبح کی نماز پر (دن اور رات کے فرشتوں کی) گواھی ھوتی ہے۔
چوتھی دلیل:
پیغمبر اکرم (ص)کا فرمان ہے:“صلّوا کما اُصلّی”نماز کو میرے طور طریقے پر بجالاؤ۔ رسول اکرم(ص) کے قول ،فعل،اورتقریر(محضررسول(ص) میں کوئی عمل انجام دیا جائے اور رسول(ص) اس کا مشاھدہ کرنے کے بعد خاموش رھیں) کو سنت رسول(ص) کہا جاتا ہے۔ھر وہ بات جو پیغمبر(ص) کی زبان اقدس سے جاری ھو،اور ھر وہ کام جس کو رسول(ص) انجام دیں اور ھر وہ چیز جو پیغمبر(ص) کی جانب سے مورد تصدیق و تائید ھو(یعنی جب ان کے سامنے کوئی کام انجام دیا جائے اور وہ اس سے منع نہ کرے)سنت رسول(ص) کی حیثیت رکھتا ہے۔
مذکورہ حدیث میں پیغمبر(ص) نے فرمایا : نماز کو ایسے بجا لاؤ جیسے میں بجا لاتا ھوں۔
پیغمبر(ص)کے قول و فعل اور تقریر (تائید) سے دو نمازوں کے ایک ساتھ پڑھنے اور ان کو جدا جدا کر کے پڑھنے کی سیرت ھمیں ملتی ہے۔
لھذٰا دونمازوں کو ایک ساتھ جمع کرنا جائز ہے ،کیونکہ پیغمبر اکرم(ص) سے منقول تیس سے زیادہ روایات اس بات پر دلالت کرتی ہیں کہ پیغمبر(ص)نےاپنی نمازوں کوجمع بین الصلاتین کی صورت میں ادا کیا،جبکہ یہ روایات،عبداللہ بن عباس،عبداللہ بن عمر، عبداللہ ابن مسعود، ابوھریرہ اورجابربن عبداللہ انصاری جیسے بزرگ اصحاب کے واسطہ سے ،اھل سنت کی معتبرکتابوں(صحاح)میں نقل ھوئی ہیں لیکن مختلف مسالک سے متعلق اکثر فقھاء نے ان روایات کے صحیح اورمعتبر ھونے کا اعتراف کرنے کے باوجود ان احادیث کی تاویل،اور ان کے معنیٰ اصلی و حقیقی میں بے جا تصرف اور رد ّوبدل کرنے کی کوشش کی ہے۔ جیسے مثال کے طور پر،صحیح بخاری کی ابن عباس سے منقول روایت ہے :
پیغمبر اکرم (ص) نے مدینہ میں مغرب و عشاء کی سات رکعا ت اور ظھر و عصر کی آٹھ رکعات نماز کو جمع کی صورت میں ادا کیا،تو (اس حدیث کے بارے میں) ایوب نے کھا کہ پیغمبر(ص) نے شاید ایسا بارش ھونے کی وجہ کیا ھو؟جواب میں کھا گیا ممکن ہے ایسا ھی ھو۔(۱۲)
اس منقولہ روایت میں ھم واضح طور پر اس چیز کا مشاھدہ کرتے ہیں کہ جناب ایوب روایت کو اس کے ا صلی معنی ومفاھیم (جو کی جمع بین صلاتین ہے ) سے دور کرنا چاھتے تھے،لھذٰا “لعلہ فی لیلة مطیرة”کے الفاظ کے ساتھ اس کی تاویل کی کہ شاید پیغمبر(ص) نے نمازوں کے درمیان یہ جمع بارش کی رات کی ھو۔جبکہ یہ حدیث اور دوسری بھت سی روایات واضح طور پر دو نمازوں کے جمع کے جواز کو بیان کر رھی ہیں،اَور جناب ایوب یہ چاھتے تھے کہ اُن کے اس جملہ(لعلّہ فی لیلة مطیرة)کے ذریعہ یہ روایت جمع بین الصلاتین پر دلالت نہ کرے۔جبکہ نمازوں کے درمیان جمع کرنے کا جائز ھونا یقینی ہے کیونکہ پیغمبر اکرم(ص)نے ایسا کیا ہے ۔
جیسا کہ مذکورہ احادیث اور دوسری متعدد روایات اس مطلب پر بہت واضح دلیل ہیں اور اس حکم جواز کو سفر اور بیماری کی صورت میں منحصر کرنا ایک مشکوک اور غیر یقینی بات ہے،کیونکہ راوی اپنی طرف سے جمع بین الصلاتین کی علت کو ان الفاظ میں بیان کر رھا ہے(لعلّہ فی سفرِِو مطرِِ)کہ شاید پیغمبر(ص) نے ایسا بارش،سفر یا سردی کی وجہ سے کیا ھو؟ تو جواب دیا: ھاں شاید ایسا ھی ہے جیسا کہ آپ نے بخاری کی ایوب سے نقل کردہ روایت میں اس چیز کا مشاھدہ کیا ۔لیکن ھم تو پیغمبر اعظم(ص) کے واضح و روشن حکم پر عمل کریں گے،اور ان کا واضح و روشن حکم وھی جواز جمع بین الصلاتین ہے جو یقینی حکم ہے اور یم راوی کے قول کو اُس کی تاویل کر کے صحیح معنیٰ کومشکوک و غیر یقینی بناتے ہیں اس سے صرف نظر کر تے ہیں،اور ایک مسلمان کا وظیفہ بھی یقین پر عمل کرنا اور مشکوک کو ترک کرنا ہے ۔
یہ( غلط) تاویل کرنا ایک ایسی بیماری ہے جس میں اکثرعلماء مبتلاء یونے کی وجہ سے یقین کو چھوڑدیتے ہیں اور شک و ظن پر عمل کرتے ہیں،جبکہ اُن کا عمل قرآن کی مندرجہ ذیل آیت کے بالکل مخالف ہے :
“ما اتاکم الرسول فخذوہ وما نھاکم عنہ فانتھوا”(۱۳)
جو تم کو رسول(ص) دیں اسے لے لواور جس سے منع کردیں اُس سے باز رھو۔
مثلاََ اھل سنت کے بزرگ عالم دین فخر رازی اس کا اقرار کرتے ہیں کہ احادیث مذکورہ اور آ یة شریفہ، نمازوں کے درمیان جمع کرنے کے جواز پر دلالت کر رھی ہیں ،ان کی عین عبارت آپ کے حاضر خدمت ہے:
اگر ھم لفظ “الغسق”کے ظاھر اولیہ کو مدّنظر رکھتے ھوئے اس کا معنیٰ “الظلمة” رات کی تاریکی اور اندھیرا مراد لیں تو غسق سے مراد مغرب کا اوّل وقت ہے۔تو اس بناء پر آیت مذکورہ میں نماز کے تین اوقات بیان کئے گئے ہیں ۔
۱۔ زوال کا وقت
۲۔ مغرب کا اول وقت
۳۔ فجر کا وقت
اس تقسیم کے اقتضاء کے مطابق زوال ، ظھر اور عصر دونوں کا وقت ہے،لھذٰا زوال کا وقت ان دونوں نمازوں کا مشترک وقت شمار ھو گااوراول مغرب، مغرب و عشاء کا وقت ھوگا اس طرح یہ وقت مغرب و عشاء کا مشترک وقت قرار پاتا ہے۔اس تمام گفتگو کا اقتضاء یہ ہے کہ نماز ظھرو عصر،مغرب و عشاء کو جمع کرنے کی صورت میں ھر حال میں ادا کرنا جائز ہے لیکن چونکہ دلیل موجود ہے جو یہ دلالت کر رھی ہے کہ حالت حضر (کہ جب انسان سفر میں نہ ھو)میں نمازوں کے درمیان جمع کرنا جائز نھیں لھذٰا جمع فقط سفراور بارش وغیرہ جیسے عذر کی بناء پر جائز ہے۔(۱۴)
اس فقیہ و مفسرکا مذکورہ کلام تعجب انگیز ہے کہ اس نے کس طرح آیت “اقم الصلوة لدلوک الشمس الی غسق الیل․․․․”سے مطلقاََ نماز ظھر و عصراور مغرب و عشاء کے مابین جمع کے جوازکا اظھار کیاہے اورپھر اچانک ھی اپنی رائے یہ کھتے ھوئے تبدیل کردی کہ”الاّ انہ دلیل علیٰ الجمع فی الحضر لا یجوز؟”
(لیکن چونکہ دلیل موجود ہے جو یہ دلالت کر رھی ہے کہ حالت حضر (کہ جب انسان سفر میں نہ ھو)میں دو نمازوں کو جمع کرنا جائز نھیں ہے لھذاجمع فقط سفراور بارش وغیرہ جیسے کسی عذر کی بناء پر جائز ہے)۔
ھم جناب فخر رازی سے یہ سوال کرتے ہیں کہ خدا و رسول(ص) کے واضح فرمان کے بعد وہ کون سی دلیل کا سھارا لے رھے ہیں؟حالت حضر میں جمع کرنا کیوں حرام ہے؟اس تحریم و حرمت کو کس دلیل سے اخذکیاگیا ہے؟جبکہ قرآن اور سنت رسول(ص) دونوں واضح طور پر سفر و حضر میں نمازوں کو اکٹھا ادا کرنے کے جواز کو بیان کر رھی ہیں اورکیا خود پیغمبر اکرم(ص) نے عملی طور پرایسا نھیں کیا؟ لھذا فخر رازی کا یہ اجتھاد باطل وغلط ہے کیونکہ ان کا یہ اجتھاد قرآن اورسنت رسول(ص) کے خلاف ہے بلکہ اس کے مقابلے میں ہے ۔دوسرے الفاظ میں یہ اجتھاد در مقابل نصّ ہے۔(واللہ اعلم)
حوالہ جات:
۱۔ سورہ اسراء آیت ۷۸۔
۲۔ صحیح بخاری ج۱ ص۱۱۳۔
۳۔ صحیح بخاری ج۱ص۱۱۳۔
۴۔ سنن ترمذی ج۱ ص۳۵۴،حدیث ۱۸۷ باب ،ما جاء فی الجمع۔
۵۔ سنن نسائی ،ج۱ ص۲۹۰باب الجمع بین الصلاتین۔
۶۔ سنن نسائی ج۱ ص۲۸۶ ،باب الوقت الذی یجمع فیہ المقیم۔
۷۔ مصھف عبد الرزاق ج۲ ص۵۵۲،حدیث ۴۴۳۸۔
۸۔ مسند البزار ج۱ ،ص۲۸۳،حدیث ۴۲۱۔
۹۔ المعجم الکبیر الطبرانی ،ج۱۰ ص۲۶۹،حدیث ۱۰۵۲۵۔
۱۰۔سنن ترمذی ،ج۱ ص۳۵۴،حدیث ۱۸۷باب ما جاء فی الجمع۔
۱۱۔ سورہ اسراء ،آیت ۷۸۔
۱۲۔ صحیح بخاری ج۱ ص۱۱۰،باب تاخیر الظھر الی العصر۔
۱۳۔ سورہ حشر ،آیت ۷۔
۱۴۔ تفسیر رازی ،الکبیر ،ج۲۱،۲۲۔ص۲۷۔

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
علمی دینی ، فقہی معاملہ میں علماء کا اجتہادی اختلاف ممکن ہوتا ہے – اپنے فقہ اور جمہور علماء کے مطابق عمل کریں – اللہ ہماری ہدایت فرماتے
…………….

 نماز کی اہمیت ، مسائل ، طریقه اور جمع بین الصلاتین – دو نمازوں کو جمع کرنا

………………………………….

مجبوری میں کرسی پر بیٹھ کر نماز پڑھنا >>>>>>

………………………………….

مزید پڑھیں:

Also Related:

~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~  ~ ~ ~  ~
SalaamOne سلام

Humanity, Religion, Culture, Tolerance, Peace

انسانیت ، علم ، اسلام ،معاشرہ ، برداشت ، سلامتی 
بلاگز، ویب سائٹس،سوشل میڈیا، میگزین، ویڈیوز,کتب

Web,Books, Articles, Magazines,, Blogs, Social Media,  Videos

Over 3 Million visits/hits

(Visited 1 times, 1 visits today)