قرآن حکیم سب سے بڑا معجزہ Quran, The Eternal Miracle

اور کہتے ہیں کہ یہ (پیغمبر) اپنے پروردگار کی طرف سے ہمارے پاس کوئی نشانی کیوں نہیں لاتے۔ کیا ان کے پاس پہلی کتابوں کی نشانی نہیں آئی؟

Qur’an is not a book of ‘science’, but a book of ‘signs’ (ayaats), there are more than thousand verses of Qur’an referring to various subjects of science, such as astronomy, physics, geography, geology, oceanology, biology, botany, zoology, medicine, physiology, embryology as well as general science, mostly unknown to humanity at the time of its revelation, fourteen centuries ago. Some verses ....keep reading >>>>

وَقَالُوا لَوْلَا يَأْتِينَا بِآيَةٍ مِّن رَّبِّهِ ۚ أَوَلَمْ تَأْتِهِم بَيِّنَةُ مَا فِي الصُّحُفِ الْأُولَىٰ

اور کہتے ہیں کہ یہ (پیغمبر) اپنے پروردگار کی طرف سے ہمارے پاس کوئی نشانی کیوں نہیں لاتے۔ کیا ان کے پاس پہلی کتابوں کی نشانی نہیں آئی؟

قرآن حکیم سب سے بڑا معجزہ ۔
کفاریہ بھی کہا کرتے تھے کہ آخر کیا وجہ ہے کہ یہ نبی اپنی سچائی کا کوئی معجزہ ہمیں نہیں دکھاتے؟ جواب ملتا ہے کہ یہ ہے قرآن کریم جو اگلی کتابوں کی خبر کے مطابق اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی امی (صلی اللہ علیہ وسلم) پر اتارا ہے جو نہ لکھنا جانیں نہ پڑھنا (صلی اللہ علیہ وسلم) ۔ دیکھ لو اس میں اگلے لوگوں کے حالات ہیں اور بالکل ان کتابوں کے مطابق جو اللہ کی طرف سے اس سے پہلے نازل شدہ ہیں ۔ قرآن ان سب کا نگہبان ہے۔ چونکہ اگلی کتابیں کمی بیشی سے پاک نہیں رہیں، اس لئے قرآن اترا ہے کہ ان کی صحت غیرصحت کو ممتاز کردے۔

سورۃ عنکبوت میں کافروں کے اس اعتراض کے جواب میں فرمایا (قُلْ اِنَّمَا الْاٰيٰتُ عِنْدَ اللّٰهِ وَمَا يُشْعِرُكُمْ ۙ اَنَّهَآ اِذَا جَاۗءَتْ لَا يُؤْمِنُوْنَ)

یعنی کہہ دے کہ اللہ تعالیٰ رب العالمین ہر قسم کے معجزات ظاہر کرنے پر قادر ہے میں تو صرف تنبیہہ کرنے والارسول ہوں میرے قبضے میں کوئی معجزہ نہیں لیکن کیا انہیں یہ معجزہ کافی نہیں کہ ہم نے تجھ پر کتاب نازل فرمائی ہے جو ان کے سامنے برابر تلاوت کی جارہی ہے جس میں ہر یقین والے کے لئے رحمت وعبرت ہے ۔

وَأَقْسَمُوا بِاللَّـهِ جَهْدَ أَيْمَانِهِمْ لَئِن جَاءَتْهُمْ آيَةٌ لَّيُؤْمِنُنَّ بِهَا ۚ قُلْ إِنَّمَا الْآيَاتُ عِندَ اللَّـهِ ۖ وَمَا يُشْعِرُكُمْ أَنَّهَا إِذَا جَاءَتْ لَا يُؤْمِنُونَ ﴿ 6- الانعام:109)

 یہ لوگ کڑی کڑی قسمیں کھا کھا کر کہتے ہیں کہ اگر کوئی نشانی ہمارے سامنے آ جائے تو ہم اس پر ایمان لے آئیں گے اے محمدؐ! ان سے کہو کہ “نشانیاں تو اللہ کے پاس ہیں” اور تمہیں کیسے سمجھایا جائے کہ اگر نشانیاں آ بھی جائیں تو یہ ایمان لانے والے نہیں﴿ 6- الانعام:109)

صحیح بخاری ومسلم میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) فرماتے ہیں ہر نبی کو ایسے معجزے ملے کہ انہیں دیکھ کر لوگ ان کی نبوت پر ایمان لے آئے ۔ لیکن مجھے جیتا جاگتا زندہ اور ہمیشہ رہنے والا معجزہ دیا گیا ہے یعنی اللہ کی یہ کتاب قرآن مجید جو بذریعہ وحی مجھ پر اتری ہے۔ پس مجھے امید ہے کہ قیامت کے دن تمام نبیوں کے تابعداروں سے میرے تابعدار زیادہ ہوں گے ۔

یہ یاد رہے کہ یہاں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) کا سب سے بڑا معجزہ بیان ہوا ہے اس سے یہ مطلب نہیں کہ آپ کے معجزے اور تھے ہی نہیں علاوہ اس پاک معجز قرآن کے آپ کے ہاتھوں اس قدر معجزات سرزد ہوئے ہیں جو گنتی میں نہیں آسکتے۔ لیکن ان تمام بیشمار معجزوں سے بڑھ چڑھ کر آپ کا سب سے اعلیٰ معجزہ قرآن کریم ہے۔

اگر اس محترم ختم المرسلین آخری پیغمبر علیہ السلام کو بھیجنے سے پہلے ہی ہم ان نہ ماننے والوں کو اپنے عذاب سے ہلاک کردیتے تو ان کا یہ عذر باقی رہ جاتا کہ اگر ہمارے پیغمبر آتے کوئی وحی الٰہی نازل ہوتی تو ہم ضرور اس پر ایمان لاتے اور اس کی تابعداری اور فرماں برداری میں لگ جاتے اور اس ذلت و رسوائی سے بچ جاتے۔ اس لئے ہم نے ان کا یہ عذر بھی کاٹ دیا۔ رسول بھیج دیا، کتاب نازل فرمادی، انہیں ایمان نصیب نہ ہوا، عذابوں کے مستحق بن گئے اور عذر بھی دور ہوگئے۔ ہم خوب جانتے ہیں کہ ایک کیا ہزاروں آیتیں اور نشانات دیکھ کر بھی انہیں ایمان نصیب نہیں ہوگا۔ ہاں جب عذابوں کو اپنے آنکھوں سے دیکھ لیں گے اس وقت ایمان لائیں گے لیکن وہ محض بےسود ہے جیسے فرمایا ہم نے یہ پاک اور بہتر کتاب نازل فرما دی ہے جو بابرکت ہے تم اسے مان لو اور اس کی فرماں برداری کرو تو تم پر رحم کیا جائے گا، الخ یہی مضمون آیت ( وَاَقْسَمُوْا باللّٰهِ جَهْدَ اَيْمَانِهِمْ لَىِٕنْ جَاۗءَتْهُمْ اٰيَةٌ لَّيُؤْمِنُنَّ بِهَا ١٠٩۔) 6- الانعام:109)، میں ہے کہ کہتے ہیں کہ رسول کی آمد پر ہم مومن بن جائیں گے معجزہ دیکھ کر ایمان قبول کرلیں گے لیکن ہم ان کی سرشت سے واقف ہیں یہ تمام آیتیں دیکھ کر بھی ایمان نہ لائیں گے۔ پھر ارشاد ہوتا ہے کہ اے نبی (صلی اللہ علیہ وسلم) ان کافروں سے کہہ دیجئے کہ ادھر ہم ادھر تم منتظر ہیں ۔ ابھی حال کھل جائے گا کہ راہ مستقیم پر کون ہے؟ حق کی طرف کون چل رہا ہے ؟ عذابوں کو دیکھتے ہی آنکھیں کھل جائیں گی اس وقت معلوم ہو جائے گا کون گمراہی میں مبتلا تھا۔ گھبراؤ نہیں ابھی ابھی جان لوگے کہ کذاب وشریر کون تھا ؟ یقینا مسلمان راہ راست پرہیں اور غیرمسلم اس سے ہٹے ہوئے ہیں- (تفسیر ابن کثیر )

………………………………………………………………

قرآنی اعجازِبیان
قرآنِ کریم معجزہ ہے جو آخری نبی محمد عربی … پر جستہ جستہ ۲۳ سالوں میں نازل ہوا، معجزہ کی شان ہی یہ ہوتی ہے کہ انسانی بس اور قدرت سے باہر ہو، لہٰذا قرآن کی مثیل ونظیر بھی انسانی قدرت وطاقت سے ماوراء ہے۔
نیز یہ ایسا معجزہ ہے جو رہتی دنیا تک کی خلقت کو اپنے لانے والے کی صداقت کا یقین کراتا رہے گا،نتیجتاً لوگ حلقہٴ اسلام سے روز افزوں وابستہ ہوتے رہیں گے، رسول اللہ … نے ایک حدیث میں اسی حقیقت کا انکشاف کیاہے۔
ما من الانبیاء نبي الا أعطي ما مثلہ آمن علیہ البشر، وانما کان الذي أوتیت وحیًا أوحاہ اللّٰہ الي، وأرجو أن أکون أکثرہم تابعًا یوم القیامة(۱)
(ہر نبی کو ایسا معجزہ دیاگیا جس کا مشاہدہ کرکے انسانیت ایمان لاتی رہی، مجھے اللہ پاک نے ایسا معجزہ وحی کی شکل میں دیا ہے (اس میں غور وفکر کرکے قیامت تک لوگ ایمان لاتے رہیں گے) مجھے امید ہے کہ روزِ قیامت میرے متبعین زیادہ ہوں گے)
لیکن دین کے باغی اور فطرتِ انسانی سے منہ موڑنے والوں نے تکذیب کو اپنا وطیرہ بنایااور اس معجزئہ قرآن سے متعلق مختلف قیاس آرائیاں کرنے لگے، تو قرآن نے مرحلہ وار تین قسطوں میں ان سے چیلنج کیااور مطالبہ کیا کہ اگراس کلامِ الٰہی کی حقانیت میں تمہیں شک ہے تو اس جیساقرآن، نہیں تو دس سورتیں، یا پھر ایک چھوٹی یا بڑی سورت ہی بنالاؤ، ہم تمہاری بکواسوں کو تسلیم کرلیں گے، لیکن بلند وبانگ ڈینگیں ہانکنے والے ششدر رہ گئے، انھوں نے اپنی غیرت نیلام کردی، بہو بیٹیاں دشمنوں کے حوالے کردیں، گردنیں کٹوائیں، حملے بھی کیے اور حملے کا جواب بھی دیا، سب کچھ گوارہ لیکن یہ نہ ہوسکا کہ صرف ایک آیت ہی بناڈالتے، روز روز کا جھگڑا منٹوں اور سکنڈوں میں مٹ جاتا، قرآن اپنے نزول سے لے کر ہنوز چیلنج کررہاہے لیکن کوئی اس کا معارضہ ومقابلہ کرنے والا آج تک پیدا نہ ہوسکا جو اپنے مقابلے سے اس کی اعتباریت میں فرق پیدا کرسکے۔
بہرحال قرآن معجزہ ہے جس کا مقابلہ محال ہے، لیکن وجہ اعجاز کیاہے، صاحب مناہل العرفان کل چوبیس وجوہ: بعض وجوہِ صحیحہ اور بعض وجوہِ معلومہ ذکر کرتے ہیں(۲)
لیکن اکثر اہل علم حضرات کی رائے ہے کہ قرآن پاک اپنی فصاحت وبلاغت یا بزبان دیگر ”حسن بیان“ میں معجزہ ہے، علامہ خطابی فرماتے ہیں:
ذہب الأکثرون من علماء النظر الی أن وجہ الاعجاز فیہ من جہة البلاغة(۳)
(اکثر اہل فکر ودانش علماء کی رائے ہے کہ وجہ اعجاز بلاغت کی جہت سے ہے)
قریب قریب یہی بات اکثر علماء کے کلام میں پائی جاتی ہے، نیز منطقی لحاظ سے قرینِ قیاس بھی ہے، کیوں کہ یہ کلام جن عربوں میں نازل ہوا وہ ہر علم و فن سے بے بہرہ تھے لیکن فصاحت وبلاغت میں اوج کمال پر پہنچے ہوئے تھے۔ گویا کہ شعر و شاعری، زبان وادب، اور تعبیر وبیان ان کے گھر کی لونڈی ہیں۔ اس لیے ان سے کچھ عذر نہ ہوسکا کہ ہم تو اس فن کو جانتے ہی نہیں، جاننے والوں کو چیلنج کرو، احمد حسن الزیات رقم طراز ہیں:
من قائل أنہ الفصاحة الرائعة المذہب الواضح والأسلوب الموثق ونحن الی ہذا الرأی أمیل؛ فان القوم الذین تحدوا بہ لم یکونوا فلاسفة ولا فقہاء حتی یکون عجزہم عن الاتیان بمثلہ معجزة، انما کانوا بلغاء مصادع وخطباء مصاقع وشعراء فحولاً، وفي القرآن من دقة التشبیہ والتمثیل وبلاغة الاجمال والتفصیل وروعة الأسلوب وقوة الحجاج ما یعجز طوق البشر ویرمي المعارضین بالسُّکات والحَصَر․(۴)
(بعض حضرات اس بات کے قائل ہیں کہ اس قرآن میں شاندار فصاحت، واضح فکر و نظریہ اور مستحکم اسلوب پائے جاتے ہیں میری یہی رائے ہے کیوں کہ جس قوم کو للکارا گیا وہ نہ تو منطقیانہ موشگافیوں سے واقف تھے نہ ہی فہم وفراست کے حامل کہ ان کا اس جیساکلام پیش کرنے سے عاجز رہنا معجزہ ہوتا، ہاں وہ میدان بلاغت کے ہیرو، بلند پایہ مقرر، اور قادرالکلام شاعر تھے، نیز قرآن میں دقیق تشبیہ وتمثیل، ایجاز واطناب، حسین اسلوب اور قوت استدلال نے انسانی قوت کو درماندہ کردیا اور مخالفین پر سکتہ وسناٹا طاری کردیا)۔

اعجازِ بیانی کا امتیاز
بہرحال ایک طبقہ اس پر مصر ہے کہ قرآن کا اعجاز فصاحت و بلاغت کی وجہ سے ہے لیکن علماء کے مختلف اقوال سے یہ بات بھی مترشح ہوتی ہے کہ قرآن کی ہر جہت معجزہ ہے، اس لیے کہ اس کے مخاطبین جہاں عرب کے فصحاء و بلغاء ہیں اسی طرح رہتی دنیا تک کی اقوام ہیں، ان میں یہود و نصاریٰ جیسے دینی پیشوائی کے دعوے دار بھی ہیں اور فلاسفہٴ یونان سے لے کرہندوستان کے ہندو جوگ بھی، یہی وجہ ہے کہ آج اتنی صدیاں گز رگئیں، زمانے نے نہ جانے کتنے پلٹن کھائے، انقلابات کے کیسے کیسے دور آئے اور گزرگئے، سائنس وٹکنالوجی نے کتنی ترقیاں کیں لیکن آج تک کوئی ایساشخص پیدا نہ ہوسکا جو قرآن کی کسی جہتِ اعجاز کو بے اعتبار کرسکا ہو۔
ہاں اتنی بات ضرور ہے کہ قرآنِ کریم کا بلیغانہ وفصیحانہ اسلوب ایسا اعجاز سدا بہار ہے جس میں کوئی آسمانی کتاب تک شریک و سہیم نہیں، بیانی اعجاز کی یہ جہت اتنی نمایاں ہے کہ جو بھی سنا خواہ وہ عربی زبان و بیان میں پہچان رکھتا ہو یا عربی کی الف با سے بھی واقف نہ ہو لیکن اس کا جذب اندرون پکار اٹھتا ہے۔
واللّٰہ انہ یقولہ الذي یقول حلاوة وان علیہ لطلاوة․․․ وانہ لیعلو وما یعلی(۵)
(خدا کی قسم جو یہ کلام بولتے ہیں اس میں بلا کی شیرینی اور رونق ہے، اوریہ کلام غالب ہی رہتا ہے مغلوب نہیں ہوتا ہے)
اعجازِ بیانی کا معجزانہ امتیاز
اعجاز کی معرفت کے لیے کوئی معیار قائم کرنا تقریباً محال ہے، ہر چند کہ بعض علماء نے کوشش کی ہے کہ کوئی منضبط قاعدہ وضابطہ کے تحت اعجازِ بیانی کو داخل کردیا جائے، ان میں غالباً سب سے پہلا نام علامہ خطابی کا ہے جن کی پیروی کرتے ہوئے مختلف مفسرین نے بھی اختیار کیاہے،

علامہ خطابی کے قول کاخلاصہ یہ ہے کہ:
بلغاء وفصحاء کے کلام تین قسم کے ہوتے ہیں: (۱) اعلیٰ درجے کا فصیح و بلیغ (۲) معمولی فصیح وبلیغ (۳) بالکل سادہ و سلیس۔ قرآن پاک کا امتیاز ہے کہ ہر ایک سے اپنے مخاطب کی رعایت کرتے ہوئے وافر حصہ لیتاہے جو قرآن ہی کا حق ہے۔(۶)
لیکن علامہ خطابی اپنی کوشش میں کس حد تک کامیاب ہیں یہ کہنا مشکل ہے، کیوں کہ کسی قدر قاعدہ و ضابطہ کو متعین کرلیں لیکن آخری فیصلہ تو ذوق ووجدان ہی کو کرنا پڑتا ہے یہ تو اس خوشبو کی مانند ہے جو پھول کی پنکھڑیوں میں پنہاں ہوتی ہے، جس کو محسوس کیاجاسکتا ہے لیکن لفظوں میں بیان نہیں کیاجاسکتا ہے۔
اس لیے اس کے اعجاز کی شہادت کیلئے یہی کافی ہے کہ اتنا عرصہ گزرنے کے بعد بھی کوئی چیلنج قبول نہ کرسکا، بلکہ اپنی درماندگی کااعتراف ہر صاحب ذوق کو خواہ دبے لفظوں میں ہی سہی کرنا پڑا۔
تاہم ایسے اصول وضوابط کا جائزہ لینا ضروری ہے جن کی رعایت کرنے سے کلام کی شان نرالی ہوتی ہے اور ”تاثیر“ میں چار چاند لگ جاتا ہے۔ دراصل کلام کا موٴثر ہونا ہی بیان کی غرض و غایت ہے، نیز کلام کا موٴثر ہونا چند وجوہ کی بنا پر ہوتا ہے، اس لحاظ سے قرآن کے اعجازِ بیانی کو چار خانوں میں تقسیم کرسکتے ہیں۔
(۱) مفردات کا اعجاز (۲) جملوں اور ترکیبوں کا اعجاز (۳) اسلوب کا اعجاز (۴) نظم و ربط بین الآیات کا اعجاز۔

مفردات کا اعجاز
مفردات کے لحاظ سے اگر قرآن پر غور کیاجائے تو اس کا ہر لفظ اپنی جگہ اتنا فصیح معلوم ہوتا ہے کہ اس کی جگہ دوسرے کلمے کو خواہ اسی معنی ومفہوم کاہو نہیں رکھ سکتے ہیں، اس کے برخلاف زبان دانی کے دعوے کرنے والوں کے کلام میں مختلف خامیاں پائی جاتی ہیں۔ مثلاً متنبی عربی زبان کا مشہور شاعر ہے، اس کو اپنی زبان دانی پر ناز بھی تھا اسی لیے دعوئہ نبوت بھی کربیٹھا حالانکہ اس کا سارا کمال قرآن سے ہی مستفاد تھا جیساکہ اس کی تاریخ حیات سے معلوم ہوتا ہے۔ اس کے کلام کا اگر موازنہ کیا جائے تو بہت سارا نقص نظر آئے گا اور ایسا محسوس ہوگا کہ اگر اس لفظ کے بجائے یہ لفظ ہوتا تو زیادہ اچھاہوتا مثلاً اس کا ایک شعر ہے:
ان القتیل مضرجاً بدموعہ مثل القتیل مضرجاً بدمائہ(۷)
شہید محبت شہید جنگ کی طرح ہوتا ہے۔
لیکن ذرا ”مثل“ کو ہٹاکر ’فوق“ رکھدیں تو دیکھئے حسن کتنا دوبالا ہوتا ہے۔
ان القتیل مضرجاً بدموعہ فوق القتیل مضرجاً بدمائہ
شہید محبت کا مقام جنگی شہید سے بڑھا ہوتا ہے۔
لیکن قرآن نے لفظ ”مثل“ کو تقریباً چالیس جگہ استعمال کیا ہے۔ کسی ایک جگہ بھی ادھر ادھر نہیں کرسکتے ہیں۔
یہ صرف ”مثل“ کے ساتھ خاص نہیں ہے بلکہ قرآن کے جس لفظ کو بھی لے لیں اس کی جگہ دوسرا لفظ حتی کہ اسی معنی کا متبادل و مترادف لفظ بھی نہیں رکھ سکتے ہیں۔ ایسا کرنے سے کلام کا مقصود باقی نہیں رہ سکتا ہے مثال کے طور پر قرآن میں ہے:

أتدعون بعلا وتذرون أحسن الخالقین
تم لوگ بت کو پکارتے ہو اور احسن الخالقین کو چھوڑتے ہو۔
خیال ہوسکتا ہے کہ اگر ”تذرون“ کی جگہ ”تدعُون“ ہوتو معنی میں کچھ فرق نہیں ہوگا؛ بلکہ صنعت جناس کا اضافہ بھی ہوگا۔
لیکن معاملہ ایسا نہیں ہے، وذر، اور ودع بیشک ہم معنی ہیں لیکن دونوں میں بنیادی فرق بھی ہے۔ وذر میں بالقصد چھوڑنا ملحوظ ہے؛ جبکہ ودع میں بالقصد کی کوئی قید نہیں، قرآن تو کہنا چاہتا ہے کہ تم لوگ بالقصد اپنے خالق کو ترک کررہے ہو، ظاہر بات ہے کہ یہ معنی ”ودع“ سے پیدا نہیں ہوسکتا۔
مفرداتِ قرآن میں غور کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ بہت سے ایسے الفاظ کا اضافہ ہے جو پہلے سے اس معنی میں معہود ومعروف نہیں ہیں، مثلاً موت کے لیے عرب میں ۲۴ الفاظ استعمال ہوتے تھے، سب میں عرب کے قدیم نظریہٴ کفر کی غمازی تھی، لیکن قرآن نے موت کے معنی کے لیے لفظ ”توفی“ استعمال کیا جس کے معنی پورا پورا لینے کے ہیں۔ قرینہ کے اضافے سے موت کا معنی پیدا ہوگا، جو صرف قرآن کا عطاکردہ ہے۔(۸)
بعض معانی کے لیے الفاظ ثقیل ہی استعمال ہوتے ہیں جوکہ فصاحت کے لیے عیب ہے۔ قرآن نے ایسے تمام الفاظ کو چھوڑ دیا اور ضرورت کے وقت ایسا لفظ استعمال کیاجو سنتا ہے عش عش کیے بغیر نہیں رہ سکتا، مثلاً پکی اینٹ کے لیے تین لفظ عربوں میں مستعمل تھے آجرّ، قرمد، طوب، اور تینوں ثقیل سمجھے جاتے تھے۔ قرآن نے اس معنی میں استعمال کیا:
فاوقد لي یا ہامان علی الطین فاجعل لی صرحاً․ اے ہامان گیلی مٹی پر آگ روشن کرکے میرے لیے ایک محل تعمیرکرو۔
اسی طرح ”ارض“ کی جمع اراضی و ارضون دونوں ثقیل سمجھے جاتے ہیں، قرآن نے ہردو کو چھوڑ دیا، اور ان کی جگہ استعمال کیا۔
اللّٰہ الذی خلق سبع سماوات ومن الارض مثلہن
اللہ وہ ہے جس نے سات آسمان پیدا کیے اورزمین بھی اتنی ہی۔

ترکیب کا اعجاز
مفردات کے بعدجملوں کی بندش اور ترکیب کی شوکت و سلاست کا نمبر آتا ہے اس حوالے سے اتنا ہی کہنا کافی ہوگا کہ پڑھنے والا محسوس کرتا ہے کہ زبان از خود ایک جملے سے دوسرے جملے کی طرف پھسلتی جارہی ہے، کہیں اٹکاؤ نہیں یوں لگتا ہے کہ ہموار زمین ہے یا پھر ٹھہرے سمندر کی سطح آب۔
علاوہ ازیں مختلف ترکیبیں قرآن نے ایسی استعمال کی ہے کہ جن سے مختلف گتھیاں سلجھ گئیں، مثلاً قاتل سے انتقام لینا ایک کمال سمجھا جاتا تھا۔ اس پر برانگیختہ کرنے کے لیے مختلف جملے زبان زد تھے القتل أنفی للقتل (قتل سے قتل کی روک تھام ہوتی ہے) القتل احیاء للجمیع (قتل اجتماعی زندگی ہے) أکثروا القتل لیقل القتل (قتل زیادہ کرو، قتل کی وارداتیں کم ہوجائیں گی)
لیکن قرآن نے اس کے لیے استعمال کیا ولکم فی القصاص حیوة اور تمہارے لیے قصاص میں زندگی ، ترکیب مختصر سی لیکن معانی کا ایک سمندر پنہاں ہے۔
کسی چیز کی وسعت کو بیان کرنے کے لیے مختلف جملے تھے، لیکن ساری وسعتوں کی ایک انتہاء تھی۔ قرآن نے جہنم کی وسعت بیان کرتے ہوئے کہا۔
یوم یقول لجہنم ہل امتلئت وتقول ”ہل من مزید“
جس روز ہم جہنم سے پوچھیں گے:کیا تو سیر ہوگئی تو وہ پکار اٹھے گی ”کیا کچھ اور ہے“ اس وسعت کی نہ کوئی حد ہے اور نہ انتہا۔
بتوں کی عظمت وہیبت دلوں میں اتنی جاں گزیں تھی کہ اپنی قسمت کا فیصلہ کروانے بھی ان ہی کے پاس جاتے، ان کے ناموں کے احترام اور عقیدت مندانہ جذبات سے ان کے دل لبریز تھے۔ لیکن قرآن نے صرف ایک جملے میں سب کو پاش پاش کردیا: ان ہی الا اسماء سمیتموہا أنتم وآبائکم یہ محض تمہارے اور تمہارے پرکھوں کے رکھے ہوئے نام ہیں۔ ان سے حقیقت کا کچھ واسطہ نہیں اور نہ ہی کوئی نفع و نقصان ان سے متعلق ہے۔

اسلوب کا اعجاز
اسلوب میں سب سے اچھا اسلوب، عربوں کے نزدیک ہی نہیں ہر صاحب ذوق کے یہاں ”شعری اسلوب“ ہے؛ کیوں کہ اشعار کے سنتے وقت غیرمحسوس طور پر انسان حلاوت محسوس کرتا ہے؛ لیکن علماء کا اتفاق ہے کہ قرآن کا اسلوب شعر نہیں ہے۔ حضرت شاہ ولی اللہ علیہ الرحمہ نے ”الفوز الکبیر“ میں بڑی تفصیل سے اس پر بحث کی ہے۔ جس کا حاصل یہ ہے کہ:
اس کا اسلوب ہے تو نثر، لیکن شعر کی لذت سے بڑھ کر اس میں لذت موجود ہے۔ کیوں کہ شعر کی لذت اور حلاوت کا سارا مدار ”متوازن صوتی آہنگ“ کا کان سے ٹکرانا ہے، لیکن یہ آہنگ پیدا کیسے ہوتی ہے اس کے لیے مختلف ذوق و مزاج ہیں، اور مختلف اصول و ضوابط ہیں، عربی اشعار کا سارا دارومدار خلیل بن احمد کی تخلیق کردہ اوزان پھر ردیف کی یکسانیت اور قوافی کی رعایت پر ہے، لیکن فارسی ذوق اس سے الگ ہے، اس میں اوزان کی نئی بحریں بھی ہیں، پھر حرکات و سکنات کی خاص ہم آہنگی بھی، عربی میں”کبیر“ و” قبور“ ہم وزن ہیں جبکہ فارسی میں مخل فصاحت، عربی میں زحافات اتنی زیادہ ہیں کہ وزن کا باقی رکھنا مشکل ہوتا ہے۔ فارسی میں ایسا نہیں۔
اس کے برخلاف ہندی مزاج کا ذوق دوسرا ہے، اس میں تعدادِ حروف پر دارومدار ہے، پھر بسا اوقات تعدادِ حروف میں کافی تفاوت ہوتا ہے۔
قرآنِ کریم نے ان اصولوں کو نظر انداز کردیا اور صرف ”متوازن صوتی ہم آہنگی“ کو باقی رکھا جو ہرذوق و مذاق میں قدر مشترک ہے، لہٰذا قرآن کو اگر شعر نہیں کہہ سکتے تو نثر محض بھی نہیں، یہی وجہ ہے کہ عربوں نے جب اول وہلہ میں سنا تو شعر کہنے لگے، لیکن چوں کہ شعر کے نوک وپلک اوراصول و ضوابط سے خوب واقف تھے، اس لیے اس نظریہ سے منحرف ہوئے سو کہا۔ پھر نہ جانے کون کون سے لیبل چسپاں کرنے لگے۔(۹)
پھر علمائے بلاغت کے مطابق اسلوب کی تین قسمیں ہیں: خطابی، ادبی، علمی۔ تینوں کی خصوصیات الگ الگ ہیں اور دائرئہ عمل بھی جداگانہ، لیکن قرآن ایک ہی عبارت میں تینوں اسلوب کو جمع کرتا ہے، کہ علم کی سنجیدگی بھی ہوتی ہے، خطابت کا زور بھی تو ادب کی شگفتگی بھی۔
ہر شاعر و ادیب کا میدان الگ الگ ہے۔ ایک میدان کا مرد دوسرے میدان میں بالکل ناکام ثابت ہوتا ہے مثلاً امرء القیس رزم وبزم، اور غزل کا امام ہے۔ اس سے خوف و ہیبت کا مضمون ادا نہیں ہوسکتا، یہ تو نابغہ ذبیانی کا کام ہے۔ لیکن نابغہ سے حسن طلب نہیں ہوسکتا یہ تو اعشی کا کام ہے۔
اسی طرح فارسی شعراء میں نظامی و فردوسی رزم و بزم میں، سعدی وعظ و پند میں تفوق رکھتا ہے۔ ایک فن کا امام و شہ نشیں دوسرے فن میں حیران و خاک نشیں معلوم ہوتا ہے۔
لیکن قربان جائیے قرآن کے اسلوب پر ہر مضمون کو بلیغانہ و فصیحانہ اسلوب میں بیان کرتا ہے خواہ وہ ترغیب وترہیب ہو، یا رزم و بزم، جنت و جہنم کا بیان ہو یا پھر دنیا کی مذمت کا ذکر، انبیاء وصالحین کے کردار کا تذکرہ ہو یا پھر گزرے ہوئے سرکشوں اور باغیوں کی عبرت آموز داستانِ حیات، ہر ایک کو اسی مضمون کے مناسب جوش و خروش اور پرشوکت و پرعظمت لفظ و نظم میں بیان کرتا ہے۔
پھر مخاطب بھی ہر قسم کے ہیں۔ اعلیٰ درجے کے ماہرین فنون بھی، تو متوسط طبقہ کے فصیح و بلیغ نیز الھڑ قسم کے انسان بھی، قرآن کریم باوجود کہ بیان کی جملہ اقسام پر مشتمل ہے لیکن اس کے تینوں قسموں کے مخاطب بیک وقت متاثر ہوتے ہیں اورہر کوئی سمجھنے پر مجبور ہوتا ہے کہ قرآن کا اصل خطاب اسی سے ہے۔

ربط بین الآیات کا اعجاز
قرآنِ کریم ہدایت کا اتنا جامع مجموعہ اور مختلف الانواع مضامین پر مشتمل ہونے کے باوجود ایسا محسوس ہوتاہے کہ ہر مضمون دوسرے مضمون سے مربوط ہے، بلکہ بسا اوقات دو متضاد مضمون کو اکٹھا کرتا ہے اور انسانی دماغ حیران رہ جاتاہے کہ خروج کہاں سے ہے اور دخول کہاں پر ہے، بلکہ یوں محسوس ہوتا ہے کہ یہ دونوں کبھی متضاد رہے ہی نہیں ہیں۔
لیکن اس کا مطلب ہرگز یہ نہیں ہے کہ اگر ماقبل کا مضمون سامنے نہ ہو تو مابعد کی آیات غیرمربوط معلوم ہوں گی، بلکہ ہر آیت ماقبل سے مربوط ہونے کے باوجود مستقل مضمون کی حیثیت بھی رکھتی ہے۔ یہی محمل ہے ان علماء کے کلام کا جنھوں نے ربط بین الآیات کا انکار کیا ہے۔
خلاصہ یہ کہ قرآن کریم کا اعجاز ذوقی ووجدانی ہے، لیکن اصول وضوابط کا اگر پابند بھی تسلیم کرلیا جائے تو ہر اعتبار سے اس کا اعجاز ٹکسالی ہے، بلکہ جو ادیب و شاعر ایک فن میں کامل دسترس رکھتا ہے۔ اگر اس کے کلام کا موازنہ کیاجائے تو بے اختیار زبان پر آجائے گا ”چہ نسبت خاک را باعالم پاک“ اور این الثری من الثریا۔ اس دعوے کی تصدیق کے لیے ایک مثال بطور موازنہ پیش کی جاتی ہے۔
ایک تقابلی جائزہ
امرء القیس عرب کا مشہور شاعر، رزم و بزم کی تصویر کشی کا ماہر پوری عرب برادری میں مافوق العادت قوت کا حامل تصور کیاجاتا ہے۔ اپنے رزمیہ اشعار میں گھوڑے کی تعریف کرتے ہوئے کہتا ہے:
(الف) مِکَرّ مِفَرّ مغقبل مُدْبِر معًا کجُلمود صَخْر حطّہ السیل من عَلٍ
وہ گھوڑا حملہ کرنے والا، بھاگنے والا،آگے آنے والا، پیچھے کو مڑنے والا سب ایک وقت میں، ایسا معلوم ہوتا ہے کہ ایک پتھر ہے جس کو سیلاب نے اوپر سے لڑھکادیا ہے۔
(ب) کُمیت یُزلّ اللِبْد عن حال متنہ کما ذَلّت الصفواءُ بالمتنزّل
وہ گھوڑا سیاہی وسفیدی مائل چتکبرا ہے، اس کی پیٹھ ایسی صاف ہے کہ نمدہ اپنی پشت کے وسط سے اس طرح پھسلاتا ہے جیساکہ صاف چکنا پتھر اپنے اترنے کی جگہ سے پھسل کر گرتا ہے۔
(ج) علی الذَبْل جَیّاش کأن اہتزامہ اذا جاش فیہ حمیُہ غليُ مرجلٍ
وہ دبلا پتلا ہے لیکن جوش ایسا کہ اس کے چلنے کی آواز گرمیٴ نشاط کے جوش میں دیگ کے ابلنے کی آواز معلوم ہوتی ہے۔
(د) اذا ما السابحات علی الونی أثرن الغبار بالکَدِیْد المُوَکَّل
جس وقت تیز رفتار گھوڑے تھک ہار کر پامال شدہ زمین پر غبار اڑاتے ہیں وہ گھوڑا بدستور بارش کی مانند تیز چلتا ہے۔
(ھ) یُزلّ الغلامَ الخِفّ عن صَہواتہ ویُلوي بأثواب العنیف المثقل
ہلکے پھلکے اناڑی نوجوان کو اپنی پیٹھ سے پھسلادیتاہے، اور بھاری بھرکم تجربہ کار شہ سواروں کے کپڑے گرادیتا ہے۔(۱۰)
یہ پانچ اشعار ہیں جن میں اکیاون الفاظ استعمال ہوئے ہیں۔ جو گھوڑے کی تعریف میں مقصود بناکر کہے گئے ہیں۔ یقینا سننے والا فصاحت و بلاغت کی داد دئیے بغیر نہیں رہ سکتا، لیکن قرآن نے ضمناً گھوڑے کی تعریف کرتے ہوئے کہا ہے۔
والعٰدیٰت ضبحاً، فالموریٰت قدحًا، فالمغیرات صبحًا، فأثرن بہ نقعًا، فوسطن بہ جمعًا․
قسم ہے دوڑتے ہانپتے گھوڑوں کی جوٹاپ مارکر آگ جھاڑتے ہیں، پھر صبح کے وقت تاخت وتاراج کرتے ہیں، پھر اس وقت غبار اڑاتے ہیں، پھر اس وقت دشمنوں کی جماعت میں جاگھستے ہیں۔
ان آیات میں صرف بارہ (۱۲) الفاظ ہیں اور گھوڑے کی ان میں واقعاتی وحقیقی صفات بیان کی گئی ہیں، جب کہ اشعار میں محض تخیلات ہیں۔ شاعر نے گھوڑے کی تعریف کرتے ہوئے اس کے فرار کی بھی تعریف کی ہے حالانکہ ”فرار“ خواہ کسی وجہ سے ہو عیب ہے، کمال نہیں۔ گھوڑے کی پیش قدمی کو دیگ کی آواز سے تشبیہ دی گئی جو کہ واضح نہیں جب کہ آیات میں نہ تو فرار کا ذکر ہے اور نہ گھوڑے کے دوڑنے کا، بلکہ ہانپنے کا بیان ہے جو بالکل واضح ہے۔
اشعار میں کبھی موٹاپے کا بیان ہورہا ہے تو کبھی لاغری کا جو کہ تعارض ہے اورجھوٹ بھی۔ آیات میں کوئی تعارض نہیں۔ نیز گھوڑے کا پامال شدہ زمین سے مٹی کا اڑانا کوئی کمال نہیں بلکہ اصل کمال تو جب ہے کہ زمین تربتر ہو پھر تیز چلنے سے غبار اڑے۔
اشعار میں تجربہ کار وناتجربہ کار دونوں کو یاتو گرادیتے ہیں یا پھر اس کے سامان کو ضائع کردیتے ہیں، اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ اپنے مالک کا وفادار نہیں ہے، جبکہ آیات میں گھوڑے اپنے آپ کو جوکھم میں ڈال کر منزل کی طرف رواں دواں رہتے ہیں جو وفا داری کی دلیل ہے۔
مذکورہ بالا تفصیل قرآنِ کریم کے اعجاز بیانی کو سمجھنے کے لیے کافی ہے۔ قاضی ابوبکر باقلانی نے اپنی کتاب اعجازالقرآن میں بلاغت کے دس وجوہ ذکر کرکے ہر نوع کے اعجاز کو ثابت کیا ہے وہ دس وجوہ حسب ذیل ہیں:
(۱) الایجاز (۲) التشبیہ (۳) الاستعارہ (۴) التلاؤم (۵) الفواصل (۶) التجانس (۷) التصریف (۸) التضمین (۹) المبالغہ (۱۰) حسن البیان۔(۱۱)

خلاصہ یہی ہے کہ قرآن معجزہ ہے جو اپنے مقصد میں پورے طور پر کامیاب رہا۔ اس نے پوری دنیا میں انقلاب عظیم برپا کیا۔ سوئی انسانیت کو جھنجھوڑکر رکھ دیا۔ منتشر اقوام کو متحد کیا اور راہِ راست سے منحرف جماعت کو صحیح راہ پر لگادیا، اور یہ سب طفیل ہے اس کے اعجاز گراں مایہ قدر کا۔

از: مولانا محبوب فروغ احمد قاسمی‏، مدرسہ حسینیہ کیرلا، الہند
حواشی:
(۱) بخاری شریف: ۲/۷۴۴، کتاب فضائل القرآن، باب: کیف نزل الوحی۔
(۲) مناہل العرفان للزرقانی: ۲/۲۶۱-۳۲۴ ، المبحث السابع عشر فی اعجاز القرآن
(۳) الاتقان فی علوم القرآن للسیوطی: ۲/۱۲۱۔
(۴) تاریخ الادب العربی: ۸۹
(۵) الخصائص الکبری: ۱/۱۱۳
(۶) روح المعانی : ۱/۳۱-۳۲۔ الاتقان فی علوم القرآن: ۲/۱۲۱
(۷) شرح دیوان المتنبی: ۱/۱۳۲ شارح: عبدالرحمان البرقوتی مطبوعہ: بیروت ۱۴۰۷ھ
(۸) یتیمة البیان للبنوری مقدمہ مشکلات القرآن ۸۸-۸۹
(۹) ماخوذ از العون الکبیر مع الفوز الکبیر: ۲۱۶-۲۳۰، الفصل الثانی
(۱۰) سبع معلقات: ۸۔ التوضیحات: ۲۱-۲۳
(۱۱) اعجاز القرآن للباقلانی علی ہامش الاتقان فی علوم القرآن للسیوطی: ۲/۱۶۰
دارالعلوم ، شماره : 8-9، جلد : 92 شعبان – رمضان 1429ھ مطابق اگست -ستمبر ۲۰۰۸ء

Source: http://www.darululoom-deoband.com/urdu/articles/tmp/1421556765%2003-Qurani%20Ejaz%20Bayani%20Ke_MDU_08-09_Aug%20&%20Sept_2008.htm

……………………………………….

قرآن اور جدید سائنس :

در اصل اسلام اور جدید سائنس کی آپس میں وابستگی، ربط اور موافقیت کو کہا جاتا ہے۔ اور مسلمانوں کا یہ دعویٰ ہے کہ اسلام اور جدید سائنس میں مکمل ہم آہنگی پائی جاتی ہے۔ اور قرآن مجید میں ایک ہزار سے زیادہ آیات سائنس کے متعلق گفتگو کرتی ہیں۔ قرآن میں موجود آیات کے متعلق حقائق جدید سائنس سے مکمل مطابقت رکھتے ہیں۔ مزید پڑھیں >>>>>

…………………………………………………..

قرآن کی عظمتیں اور اس کے معجزے :  مؤلّف : محمود بن احمد بن صالح الدوسری

قرآن کریم اللہ تعالیٰ کا معجز کلام ہے جس کا ایک ایک لفظ فصاحت و بلاغت کا آئینہ دار ہے۔ قرآن کریم کا بے تکلف طرز تخاطب انسان کے عقل و شعور کو جھنجوڑتا اور اللہ تعالیٰ کی بندگی پر آمادہ کرتا ہے۔ اس وقت امت مسلمہ کے گوناگوں مسائل کی بنیادی وجہ قرآن کریم کے ساتھ اس وابستگی کا ختم ہونا ہے جو کبھی مسلمانوں کا خاصہ ہوا کرتا تھا۔ ہمارے گھروں میں قرآن مجید تو موجود ہے لیکن ان کو کھولنے کی زحمت کرنا ایک مشکل امر بن چکا ہے۔ زیر نظر کتاب مسلمانوں کے دل میں قرآن کریم کی عظمت کا چراغ روشن کرنے کے لیے تصنیف کی گئی ہے تاکہ بھولا بھٹکا راہی صراط مستقیم کا مسافر بن جائے۔ مصنف نے سب سے پہلے قرآن کی عظمت کے دلائل پیش کیے ہیں اور قرآن کا تعارف قرآن ہی کی آیات مقدسہ سے کرایا ہے اس کے بعد دلائل و براہین کی روشنی میں یہ حقیقت اجاگر کی ہے کہ قرآن کریم قیامت تک کے لیے زندگی کے ہر تقاضے کا جواب دینے کے جوہر سے آراستہ ہے۔ پڑھیں >>>>

……………………………………………………

قرآن میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:۔
قُل لَّئِنِ اجْتَمَعَتِ الإِنسُ وَالْجِنُّ عَلَى أَن يَأْتُواْ بِمِثْلِ هَـذَا الْقُرْآنِ لاَ يَأْتُونَ بِمِثْلِهِ وَلَوْ كَانَ بَعْضُهُمْ لِبَعْضٍ ظَهِيرًا
کہدو کہ اگر انسان اور جن اس بات پر مجتمع ہوں کہ اس قرآن جیسا بنا لائیں تو اس جیسا نہ لا سکیں گے اگرچہ وہ ایک دوسرے کے مددگار ہوں۔
قرآن حکیم علم ، معرفت اور اسرارِ حقیقت کا خزانہ ہے اور اللہ تعالیٰ کا وعدہ ہے کہ ہم انسانوں کو اور خاص طور پر قرآن کی بیان کردہ حقیقتوں کا انکار کرنے والے منکرین کو آیات (نشانیاں) دکھاتے رہیں گے۔
زمانہ بدلتا ہے ، بدلتا رہے گا۔ کتابِ الہٰی کا سب سے بڑا کارنامہ یہی ہے کہ وہ ہر دور میں نظامِ زندگی کے لیے موثر اور کارساز ہے۔
ساری دنیا مل کر بھی اس جیسی کوئی کتاب نہیں تخلیق کر سکتی۔اس دھاگے میں ہم قر آن کی حقانیت ریاضی جو سائنس کی ایک شاخ ہے کے اصولوں کے تحت بیان کریں گے۔
احمد دیدات جو عالمِ اسلام کے مشہور مناظر ہیں کی ایک کتاب AL QURAN THE ULTIMATE MIRACLE دراصل ڈاکٹر راشد خلیفہ کی کتاب THE PERPECTUAL MIRACLE OF MUHAMMAD کی تلخیص ہے۔   اس کتاب میں سے کچھ حقائق مختصراً بیان ہیں-

قرآن کی حقانیت ریاضی کے اصولوں کی روشنی میں:

ریاضی کبھی کسی کے ساتھ جانبداری نہیں روا رکھتی۔اس کی اپیل اور زبان عالمگیر ہوتی ہے۔ہم اس ریاضی کے حوالے سے منکرین کو بتانا چاہتے ہیں کہ قرآن اللہ کی کتاب ہے اور یہ معجزوں کا معجزہ ہے۔ریاضی کے عدد “19” کو سامنے رکھیں اور پھر قرآن مجید کو اس حوالے سے دیکھتے جائیں۔
“19” نہ تقسیم ہونے والا عدد ہے۔یہ حساب یعنی ریاضی میں عدد مفرد ہے۔یہ ایک منفرد عدد ہے کیونکہ “1” سے شروع ہوتا ہے جو ہمارے نظامِ ریاضی میں کم ترین درجہ کا ہندسہ ہے اور “9” پر ختم ہوتا ہے جو نظامِ ریاضی میں سب سے بڑا ہندسہ ہے۔
قرآن پاک میں ارشاد ربانی ہے:۔
عَلَيْهَا تِسْعَةَ عَشَر(المدثر 30)
اُس پر انیس (19) مقرر ہیں
اس 19 پر مفسرین کی آراء متعلقہ تفاسیر میں دیکھی جاسکتی ہے۔لیکن وہ سب ہی تقریباً قیاسات پر مشتمل ہیں لہذا حقیقت کا علم تو اللہ کو ہی ہے۔
دنیا کی ہر زبان میں مختلف اعداد اپنی عددی اقدار کے علاوہ اضافی معنی بھی دیتے ہیں۔ مثلاً ہمارے اردو میں 786 سے مراد بسم اللہ الرحمن الرحیم لیا جاتا ہے۔420 کا عدد دھوکے باز کے لیے استعمال ہوتا ہے اسی طرح 19 کا عدد قرآن میں ایک خاص معنی رکھتا ہے جو درج ذیل بحث سے واضح ہے۔
قرآنی وحی کے تاریخ وار مطالعہ سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ عَلَيْهَا تِسْعَةَ عَشَر سورہ المدثر کی 30ویں آیت اُس وحی کی آخری آیت ہے جو حضرت جبریل امین ؑ نے حضرت محمد ﷺ کو اپنی چوتھی آمد پر دی ۔ بجائے اس کے کہ اس سورہ کی مزید 26 آیتیں دیتے اور سورت مکمل کرتے ، اگلی وحی میں پہلی وحی والی سورت یعنی ” العلق ” 96 نمبر سورت کی باقی آیتیں دیں اور سورت مکمل کر دی۔ پہلی وحی میں 96 ویں سورہ کی 5 آیات تلاوت کرائی گئیں تھیں اب مزید 14 آیات تلاوت کرا کے 19 آیات مکمل کر دیں گئیں یعنی 19 کا عدد کہنے کے فوراً بعد ایک سورت 19 آیات والی مکمل کردی۔
لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ:۔
پہلی وحی کی 5 آیات(96-1 تا 5) میں ٹھیک 19 الفاظ ہیں۔
ان الفاظ میں 76 حروف ہیں (یعنی19×4=76 )
اگر ہم آخر یعنی 114 ویں سورت سے الٹی گنتی شروع کریں تو 96 ویں سورت 19 ویں سورت ہے۔
قرآن مجید کی 114 سورتیں ہیں یعنی 19×6=114    مزید پرہیں >>>>>

 

 

Index

Quran Video Playlist :http://www.youtube.com/playlist?list=PL1D4658B86D15B88C

Quran, Science & Bible: http://www.youtube.com/playlist?list=PL634D73F5946FA810

http://SalaamOne.com